Monthly Archives: January 2014

Perspectives…

بتا مجھے میری بستی کے مکیں کیسے ہیں؟

یار  کیسے  ہیں؟  وہ  ماہ  جبیں کیسے ہیں؟

Tell me, how fare the residents of my city?

My friends

Those who love me

Are they well?

 

شبِ قدر  پوچھا  مجھ سے  رضواں نے

اہلِ عرش تو خیر، اہلِ زمیں کیسے ہیں؟

And on that mysterious night

A being of light asked me

Those who are unseen are well

How are the dwellers of earth?

 

خبر سنتا ہوں رہزنوں کی مسافتوں میں

تو کارواں کیسے ہیں؟ سفین کیسے ہیں؟

I heard about robbers

On highways

So how are are caravans?

The armadas?

 

آپ  ہی جا  پوچھئیے رازدانِ فردا سے

وو آنے والے اصحابِ مبین کیسے ہیں

And you should go and visit

The holder of future secrets

And inquire of her

How will be those who are to come?

 

جو ہم نے کہا کے آپ ہمارے ہیں تو

چیخ کے بولے نہیں نہیں! کیسے ہیں؟

When I said to her

You are mine

She screamed and said

No! How is that possible?

 

شعر کہتے ہیں استاد پر عشق جانتے نہیں

ہاۓ ہاۓ کوئی دیکھو تو! ذہین کیسے ہیں

And he knows how to write

But does not know how to love

I am awed

By his supreme intelligence!

Advertisements

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

The Royal…

ان  کا  قیام  ہوا  تو،  تھے  سفر  میں  ہم

بازار وہ گئے جب، تو انکے گھر میں ہم

When she stopped

I remained a traveller

When she went to the bazar

I found myself at her house

 

وعدہ کیا تھا خود سے، بچنا تھا اس بت سے

کیوں  آ  گئے  دوبارہ،  فریِبِ  نظر  میں ہم

I promised myself

That I would avoid that false idol

Then why

Did her sight beguile me?

 

الزام لگا، تہمت لگی، ذلّت ملی، دھتکار ہوئی

رسوا  بہت  ہوۓ،  تیری  رہگزر  میں  ہم

Accusations, blame

Ignominy and disgrace

I gained a lot

By coming across you

 

سلوکِ دیرینہ ہے یوں افلاک کا ہم سے

وہ ظلم کرتے جاتے، محو صبر میں ہم

And it is the usual way

In which the stars treat me

The punish me

I suffer in silence

 

ابھی تلک یاد ہے وہ ان کی چاراجوئی

آج  پھر  روے  غمِ  چاراگر  میں  ہم

I still remember

The kindness she showed me

I am reminded of that often

And It brings tears to my eyes

 

مہلتِ توبہ دے رب، اس دن تک بس

اتریں گے جس روز اپنی قبر میں ہم

My Lord give me time

To recant my sins

Till the day

I am put into my grave

 

ہمیں  تو  لفظوں  کو  معنی دیتے ہیں

زیر میں بھی ہم ہیں اور زبر میں ہم

And we give meaning

To all words

In the low ones

As well as the most high

 

سپاہ گر و محنت کش رہے ہم ہمیشہ

تلوار میں ہمیں تھے اور تبر میں ہم

I was a warrior

And I was ever a hard worker

I found myself in the sword

And in the ax

 

یاد نہیں کب سے ملاقات ہے آپ سے

ہوش  میں  تب  تھے  اب خمر میں ہم

I do not remember

For how long I have known you

I was sober then

But feel drunk now

 

ڈھونڈا نہ کہاں تک؟ وہ صنم بے دھڑک

کلیسا گئے  کبھی  خدا کے گھر میں ہم

And I went to so many places

To find that idol

I went to the cathedral

I went to the mosque

 

نہ منزل،  نہ نشانِ  منزل،  نہ گمان

چل پڑے ہیں یوں کس ڈگر میں ہم؟

No destination nor a sign of it

Not even a false hope

That I’d ever reach it

Then why do I walk on?

 

جیتے جی تو استاد سے ملنا نہیں ہو گا

ملیں گے اس سے میدانِ حشر میں ہم

And I doubt

That I’ll see him in this life

Perhaps I will meet him

On the day of judgement

 

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

Things Change…

وہ  پاس  آتے  آتے  بد ل سا گیا  ہے

خطرہِ عشقِ قاتل، کچھ ٹل سا گیا ہے

And she has changed

As she came closer to me

I was afraid of falling in love

And now I am no longer afraid

j

جو بچی ہے کچھ باقی، تو دے دے اس کو ساقی

کے  یہ  رند  گرتے  گرتے،  سنبھل  سا  گیا ہے

And if there is any wine left

Please give it to him O cupbearer

The drunk was about to fall

But he has steadied himself

j

یوں نہ دے توں دلاسے، یہ کسے راس آتے؟

دلِ مردہ  تیری  بات  پے،  مچل سا گیا ہے

Do not give me false hopes

They do not help anyone

But I confess, a dead heart

Can be given life with false hope

j

ہاں کبھی دونوں تھے، ایک حلقہِ یاران میں

تیرا دست میرے ہاتھ سے، نکل سا گیا ہے

And yes there was time

When I counted you amongst my friends

But now your hand

Seems so distant from mine

j

اک قطار گلوں کی، میں نے بھی سجائی تھی

یہ  کون ان پھولوں  کو،  مسل  سا  گیا  ہے؟

There was a row of flowers

That I had planted

Yet it seems

Someone has walked over them

j

بے دلی سے استاد نے یہ عمر گزاری

بے دلی سے آیا تھا، بے دل سا گیا ہے

And he has spent his life

begrudgingly

He came in to the world unhappy

And he leaves it unhappily

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

What is it?

تیری دشمنی بتاتی ہے تیری دوستی کیسی ہے

اور یہ دوستی ہے تو تیری دشمنی کیسی ہے؟

By being your enemy I learnt

What it would be to have you as a friend

And if this is being a friend

What would being an enemy entail?

 

مرنے کے کافی گر تو شیخ جی بتا گئے

کون بتاے گا ہمیں کے زندگی کیسی ہے

And he has given me lessons

On how to die

Who will teach me

How to live?

 

سنا  یہی  ہے آج  تک  کے  توں  رحمان  ہے

تو پھر مجھ دل جلے سے تیری دلگی کیسی ہے؟

And I have heard about you

That you are merciful

Then why do you play

With my heart so?

 

خیالِ زہد  کے  ساتھ  ہی  آیا  نشاطِ حیات

میں کیا کہوں کے میری بندگی کیسی ہے

The thought of piety

Was coupled with the wine of life

What would I call

My piety?

 

عمر گزری ہے منکر و نکیر کے پہلو میں

بھول گیا ہوں کے صورتِ آدمی کیسی ہے

And I’ve spent a lifetime

In the company of the angels

I have forgotten

What people look like

 

بعدِ اقرارِ وفا جو نظریں ملیں تجھ سے

تب جانا  میں  تیری سادگی کیسی ہے

And when I met your gaze

After I heard your confessions

I was mesmerized by

Your beauty, your innocence

 

وہ  بھی دن تھے کے  خلیفہ فاروق تھے

اس دور میں یا رب خواجگی کیسی ہے؟

There was a time

When our rulers made a difference

Dear God

What is kingship today?

 

مرے  پاس  آ  ذرا، کوئی  درد اپنا بتا

کچھ دل کھول اپنا، یہ تنگی کیسی ہے؟

Come closer

Tell me what has hurt you

Open your heart to me

Do not restrict yourself

 

جنوں تو ہے استاد تجھ میں  پر وفا  نہیں

تیرا عشق کیسا ہے؟ یہ عاشقی کیسی ہے؟

And it is said about me

That I have madness but no faith

They ask what is this love of yours?

What is this manner of loving?

 

Leave a comment

Filed under Uncategorized