Tag Archives: stars

Scorched Earth

کچھ  کر  کے  جانا ہے،  دکھ کو مٹانا ہے

ہم دوست تو سب کے ہیں، دشمن زمانہ ہے

I must kill the misery

Before I leave

I am a friend to all

Yet the times are hateful

 

یہ دن و رات کا سفر، یہ ستاروں کا محور

پھر قیامت کا وعدہ ہے، عجیب تماشا ہے

The rotation of the planets

The paths laid out for stars

The absurd promise that one day

It will all end

 

مل کے بچھڑ گئے، بچھڑے تو مر گئے

چھوٹی سی اک بات کا، طویل فسانہ ہے

A meeting and then parting

The parting leading to death

A small matter

A long story

 

دل  ہی  تو ٹوٹا ہے،  کیا عرش بکھرا ہے؟

ہم مان چکے کب کے، بس تم کو منانا ہے

It is just a broken heart

Not the heavens torn asunder

I have come to acceptance

Are you there yet?

 

مندر میں ہوں برہمن تو مسجد میں مسلمان

میں اور کیا بنوں گا؟  کیا کس نے بنانا ہے

I am a Brahmin in the temple

A Moslem in the mosque

What else am I to be

What else will I be?

 

لبِ استاد  پے  رہتی،  مسکان  تو ہلکی سی

دل کھول کے دیکھو تو، تپتا ہوا صحرا ہے

And yes he smiles

You can see it on his lips

If you look in his heart

You’ll find a burning desert

 

Advertisements

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry

Where did you go?

اجنبی ہم  سے،   کس  قدر  ہو گئے؟

اچھی صورت دیکھی، اُدھر ہو گئے؟

To what degree?

Have you become a stranger?

You saw a beautiful face

And went towards her?

 

صبح کو تاروں سے پوچھا  میں

ابھی یاں تھے، کدھر  ہو  گئے؟

And I asked the stars

Leaving the night sky

At morn

Hey Guys! Where are you going?

 

کون رہا باقی؟  قافلہ میں ساقی

کچھ اِدھر تو کچھ اُدھر ہو گئے

And who remains

In the caravan

Some went there

Others elsewhere

 

وہ آج کیا قہر ڈھانے نکلے ہیں؟

صداِ الاماں آئ،  جدھر ہو گئے

Her beauty

Causes people to flee

In fear

Crying, O Lord Protect Us!

 

جو گرا دستِ ساقی سے پیمانہ

رند سارے مائلِ غدر ہو  گئے

As soon as the measure

Fell from the cupbearer’s hand

The drunkards

Revolted

 

عمر کاٹے ہے سفر میں استاد

اُدھرہو گئے،  اِدھر ہو گئے

And he has spent his life

Travelling

He goes there

And then he goes there

2 Comments

Filed under Ghazal, Poetry

Misunderstandings…

خانہِ  یار  میں  بڑا  اہتمام  لگتا  ہے

میرے  ہی  قتل  کا  انتظام  لگتا  ہے

There are arrangements being made

In my lovers house

She performs rituals

To prepare for my murder

 

کیا ہے خورشید تری شعلہ نظر کے سامنے

نوری  مہتاب   تیرے   ہاتھ   جام   لگتا  ہے

And what is this sun

Before the flame in your eyes

The light of the moon

Is like a cup of wine in your hand

 

ہے طویل افسانہ ترا کے مسحور زمانہ ترا

تیرے  نام  ساتھ  کس کس  کا نام لگتا ہے؟

It is a long and sad story

The world is enthralled by you

Your name is attached

To so many others

 

فرصت کے دن نہیں، وصلِ جاناں بھی نہیں

تیرے   ذمے   آج کل  بہت  کام  لگتا  ہے

You seem to have no time

For your old friends

It appears

That there is a lot to keep you busy

 

عشق  نے  عقل پہ،  کئی پردے ڈال دیے

ان کا دھتکارنا بھی، مجھے سلام لگتا ہے

And love has

Clouded my judgement

She shuns me

Yet I think it a salutation

 

شبِ تاریک ایسی کہ تارے بھی ماند ہوۓ

یہ تاریکی  کسی دل جلے کا کام لگتا ہے

A night so dark

That even the stars dimmed out

This darkness must have been

Brought on by someone who lost his heart

 

نیند کچھ ایسی گئی ہے آنکھوں سے

وقتِ  سحر  بھی  وقتِ  شام  لگتا ہے

Sleep escapes me

So much that

The morning and night

Merge together into one

 

بےربط و بےنقط و بےتکی باتیں تیری

ہمیں تو کسی دیوانے کا کلام لگتا ہے

These words of yours

Without connections, without reason

Appear to be the work of

The mad Arab

 

اور بھی ہیں بےوفا تیری محفل میں پر

جانے کیوں استاد پہ ہی الزام لگتا ہے

And yes there are others

Who were faithless in your company

Yet time and again

I stand accused

3 Comments

Filed under Ghazal, Poetry

The Royal…

ان  کا  قیام  ہوا  تو،  تھے  سفر  میں  ہم

بازار وہ گئے جب، تو انکے گھر میں ہم

When she stopped

I remained a traveller

When she went to the bazar

I found myself at her house

 

وعدہ کیا تھا خود سے، بچنا تھا اس بت سے

کیوں  آ  گئے  دوبارہ،  فریِبِ  نظر  میں ہم

I promised myself

That I would avoid that false idol

Then why

Did her sight beguile me?

 

الزام لگا، تہمت لگی، ذلّت ملی، دھتکار ہوئی

رسوا  بہت  ہوۓ،  تیری  رہگزر  میں  ہم

Accusations, blame

Ignominy and disgrace

I gained a lot

By coming across you

 

سلوکِ دیرینہ ہے یوں افلاک کا ہم سے

وہ ظلم کرتے جاتے، محو صبر میں ہم

And it is the usual way

In which the stars treat me

The punish me

I suffer in silence

 

ابھی تلک یاد ہے وہ ان کی چاراجوئی

آج  پھر  روے  غمِ  چاراگر  میں  ہم

I still remember

The kindness she showed me

I am reminded of that often

And It brings tears to my eyes

 

مہلتِ توبہ دے رب، اس دن تک بس

اتریں گے جس روز اپنی قبر میں ہم

My Lord give me time

To recant my sins

Till the day

I am put into my grave

 

ہمیں  تو  لفظوں  کو  معنی دیتے ہیں

زیر میں بھی ہم ہیں اور زبر میں ہم

And we give meaning

To all words

In the low ones

As well as the most high

 

سپاہ گر و محنت کش رہے ہم ہمیشہ

تلوار میں ہمیں تھے اور تبر میں ہم

I was a warrior

And I was ever a hard worker

I found myself in the sword

And in the ax

 

یاد نہیں کب سے ملاقات ہے آپ سے

ہوش  میں  تب  تھے  اب خمر میں ہم

I do not remember

For how long I have known you

I was sober then

But feel drunk now

 

ڈھونڈا نہ کہاں تک؟ وہ صنم بے دھڑک

کلیسا گئے  کبھی  خدا کے گھر میں ہم

And I went to so many places

To find that idol

I went to the cathedral

I went to the mosque

 

نہ منزل،  نہ نشانِ  منزل،  نہ گمان

چل پڑے ہیں یوں کس ڈگر میں ہم؟

No destination nor a sign of it

Not even a false hope

That I’d ever reach it

Then why do I walk on?

 

جیتے جی تو استاد سے ملنا نہیں ہو گا

ملیں گے اس سے میدانِ حشر میں ہم

And I doubt

That I’ll see him in this life

Perhaps I will meet him

On the day of judgement

 

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry