Monthly Archives: August 2015

What is mine and What is yours?

خوش نصیبی تیری کے رب مہرباں تمہارا

سب جہاں تمہارا، ہے آسماں تمہارا

.

ہر رنگ نیا تیرا، ہر روپ ہے نیارا

عشق جدا تمہارا، ہے دل جدا تمہارا

.

مجھ کو چھوڑ چلے؟ مونھ موڑ چلے؟

اب کون ہو گا جاناں؟ پھر رازداں تمہارا؟

.

متاعِ ہستی بانٹ لو، مال اچھا چھانٹ لو

پھر کبھی دیکھیں گے، کیا میرا کیا تمہارا

.

بہت ورق الٹے تھے، بہت سوچ بیٹھے تھے

کتابِ جاں  میں یارا، دل کا صفحہ تمہارا

.

کیوں میری نظر سے, ڈرتے ہیں آپ ایسے؟

کمال ہے جاناں، ظرفِ نگاہ تمہارا

.

بولے استاد سے، سب دوست جاتے جاتے

ہم تو چلے میاں، حافظ خدا تمہارا

.

Aren’t you the lucky one?

Your god is so good towards you!

The earth is yours

And so is the sky

.

And every color you exhibit

Is a new one for me

Your love is new

And so is your faith

.

Are you leaving me?

Turning your face away?

I worry for you my dear

Who shall keep your secrets?

.

Lets quickly divide

What remains of my life

Take the best parts

I’ll take care of the rest

.

I turned the pages

And pondered deeply

Within the book of life

The first page belonged to you

.

So why do you

Turn away from my gaze?

I find the strength of your sight to be

Quite ironic

.

And my friends left

Saying with the utmost sincerity

We are going

May God keep you

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

And here I stand…

جشنِ رنگ و بو ہے اور میں ہوں

وہ آج روبرو ہیں اور میں ہوں

.

قریب آ کے مجھے ڈھونڈتی ہے وہ

وہ مگنِ جستجو ہیں اور میں ہوں

.

اب تک نا آیا جواب مرے نالے کا

افلاک گومگو ہیں اور میں ہوں

.

مکالمہ سنتا ہوں لالہ و بلبل کا

وہ محوِ گفتگو ہیں اور میں ہوں

.

شہرِ بتاں آ کے ہمیں یہ پتہ لگا

حسینان کو بہ کو ہیں اور میں ہوں

.

کیا بتاؤں آپ کو اپنے دل کی بات؟

معملاتِ من و توں ہیں اور میں ہوں

.

کہتا ہے استاد یہی ان کے بارے میں

وہ میری ہوباہو ہیں اور میں ہوں

.

It is a festival of light and color

And here I stand

She is with me

And here I stand

.

After coming close

She searches for me

She remains engaged in her search

And here I stand

.

Beneath the starry sky

I wept

The stars remain silent

And here I stand

.

I stand still

To eavesdrop

On the conversations between

The hummingbird and the tulip

.

For in the city of love

I discovered

Great beauty

At every step

.

What am I supposed to say

When you ask what is in my heart

Its a matter between man and god

And that is where I stand

.

And when I asked him

About her

He said

She is exactly like me

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry