Tag Archives: bazar

The both of us

آج بازار برہم کریں؟ ہم بھی تم بھی

نیلامیِ  قلم  کریں؟ ہم  بھی  تم بھی

Should we rouse

A passion somewhere?

Should we both

Put up our pens for bidding?

 

خود پے ظلم کریں ہم بھی تم بھی

جاں پہ ستم  کریں ہم بھی تم بھی

Both of us

Torture ourselves

Hurt ourselves

The both of us

 

تم جاؤ خداخانہ، ہم باسیِ میخانہ

جستجوِ علم کریں ہم بھی تم بھی

You go to the temple

I towards the tavern

We both seek

Knowledge

 

تلاش ہے کسی کی، نظرِ بےطرح کی

خواہشِ  الم  کریں   ہم  بھی  تم  بھی

We seek a vision

Like no other

A sorrow

Sought by us both

 

دعا کرتے ہیں علاجِ عشق کے لیے

دم  پے دم  کریں  ہم  بھی  تم  بھی

And we pray

For a cure

For love

A prayer repeated often

 

پتھروں میں رب نہیں تو پھر کیوں

خدا  صنم  کریں  ہم  بھی  تم بھی

And if there is no spirit

In stones

Why do we become so connected

To those rocks?

 

جو بھر گئے ہیں تیرے دل کے گھاؤ

نیا  زخم  کریں؟  ہم  بھی  تم  بھی

If your earlier wounds

Have healed

Should you and I

Make new ones?

 

یہ کیا ستم کیا؟ کیوں درد عیاں کیا

تلاشِ غم کریں؟ ہم  بھی  تم  بھی

Oh come now!

Why did you tell me

About your sorrow

Now find a new misery

 

استاد  اور کیا؟   کہنا  باقی  رہا

گفتگو ختم کریں؟ ہم بھی تم بھی

So What is left?

Yet unsaid?

Should we stop talking

The both of us?

 

Leave a comment

Filed under Ghazal

The Royal…

ان  کا  قیام  ہوا  تو،  تھے  سفر  میں  ہم

بازار وہ گئے جب، تو انکے گھر میں ہم

When she stopped

I remained a traveller

When she went to the bazar

I found myself at her house

 

وعدہ کیا تھا خود سے، بچنا تھا اس بت سے

کیوں  آ  گئے  دوبارہ،  فریِبِ  نظر  میں ہم

I promised myself

That I would avoid that false idol

Then why

Did her sight beguile me?

 

الزام لگا، تہمت لگی، ذلّت ملی، دھتکار ہوئی

رسوا  بہت  ہوۓ،  تیری  رہگزر  میں  ہم

Accusations, blame

Ignominy and disgrace

I gained a lot

By coming across you

 

سلوکِ دیرینہ ہے یوں افلاک کا ہم سے

وہ ظلم کرتے جاتے، محو صبر میں ہم

And it is the usual way

In which the stars treat me

The punish me

I suffer in silence

 

ابھی تلک یاد ہے وہ ان کی چاراجوئی

آج  پھر  روے  غمِ  چاراگر  میں  ہم

I still remember

The kindness she showed me

I am reminded of that often

And It brings tears to my eyes

 

مہلتِ توبہ دے رب، اس دن تک بس

اتریں گے جس روز اپنی قبر میں ہم

My Lord give me time

To recant my sins

Till the day

I am put into my grave

 

ہمیں  تو  لفظوں  کو  معنی دیتے ہیں

زیر میں بھی ہم ہیں اور زبر میں ہم

And we give meaning

To all words

In the low ones

As well as the most high

 

سپاہ گر و محنت کش رہے ہم ہمیشہ

تلوار میں ہمیں تھے اور تبر میں ہم

I was a warrior

And I was ever a hard worker

I found myself in the sword

And in the ax

 

یاد نہیں کب سے ملاقات ہے آپ سے

ہوش  میں  تب  تھے  اب خمر میں ہم

I do not remember

For how long I have known you

I was sober then

But feel drunk now

 

ڈھونڈا نہ کہاں تک؟ وہ صنم بے دھڑک

کلیسا گئے  کبھی  خدا کے گھر میں ہم

And I went to so many places

To find that idol

I went to the cathedral

I went to the mosque

 

نہ منزل،  نہ نشانِ  منزل،  نہ گمان

چل پڑے ہیں یوں کس ڈگر میں ہم؟

No destination nor a sign of it

Not even a false hope

That I’d ever reach it

Then why do I walk on?

 

جیتے جی تو استاد سے ملنا نہیں ہو گا

ملیں گے اس سے میدانِ حشر میں ہم

And I doubt

That I’ll see him in this life

Perhaps I will meet him

On the day of judgement

 

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry