Tag Archives: armadas

Perspectives…

بتا مجھے میری بستی کے مکیں کیسے ہیں؟

یار  کیسے  ہیں؟  وہ  ماہ  جبیں کیسے ہیں؟

Tell me, how fare the residents of my city?

My friends

Those who love me

Are they well?

 

شبِ قدر  پوچھا  مجھ سے  رضواں نے

اہلِ عرش تو خیر، اہلِ زمیں کیسے ہیں؟

And on that mysterious night

A being of light asked me

Those who are unseen are well

How are the dwellers of earth?

 

خبر سنتا ہوں رہزنوں کی مسافتوں میں

تو کارواں کیسے ہیں؟ سفین کیسے ہیں؟

I heard about robbers

On highways

So how are are caravans?

The armadas?

 

آپ  ہی جا  پوچھئیے رازدانِ فردا سے

وو آنے والے اصحابِ مبین کیسے ہیں

And you should go and visit

The holder of future secrets

And inquire of her

How will be those who are to come?

 

جو ہم نے کہا کے آپ ہمارے ہیں تو

چیخ کے بولے نہیں نہیں! کیسے ہیں؟

When I said to her

You are mine

She screamed and said

No! How is that possible?

 

شعر کہتے ہیں استاد پر عشق جانتے نہیں

ہاۓ ہاۓ کوئی دیکھو تو! ذہین کیسے ہیں

And he knows how to write

But does not know how to love

I am awed

By his supreme intelligence!

Advertisements

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry