Tag Archives: arsh

Scorched Earth

کچھ  کر  کے  جانا ہے،  دکھ کو مٹانا ہے

ہم دوست تو سب کے ہیں، دشمن زمانہ ہے

I must kill the misery

Before I leave

I am a friend to all

Yet the times are hateful

 

یہ دن و رات کا سفر، یہ ستاروں کا محور

پھر قیامت کا وعدہ ہے، عجیب تماشا ہے

The rotation of the planets

The paths laid out for stars

The absurd promise that one day

It will all end

 

مل کے بچھڑ گئے، بچھڑے تو مر گئے

چھوٹی سی اک بات کا، طویل فسانہ ہے

A meeting and then parting

The parting leading to death

A small matter

A long story

 

دل  ہی  تو ٹوٹا ہے،  کیا عرش بکھرا ہے؟

ہم مان چکے کب کے، بس تم کو منانا ہے

It is just a broken heart

Not the heavens torn asunder

I have come to acceptance

Are you there yet?

 

مندر میں ہوں برہمن تو مسجد میں مسلمان

میں اور کیا بنوں گا؟  کیا کس نے بنانا ہے

I am a Brahmin in the temple

A Moslem in the mosque

What else am I to be

What else will I be?

 

لبِ استاد  پے  رہتی،  مسکان  تو ہلکی سی

دل کھول کے دیکھو تو، تپتا ہوا صحرا ہے

And yes he smiles

You can see it on his lips

If you look in his heart

You’ll find a burning desert

 

Advertisements

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry

Perspectives…

بتا مجھے میری بستی کے مکیں کیسے ہیں؟

یار  کیسے  ہیں؟  وہ  ماہ  جبیں کیسے ہیں؟

Tell me, how fare the residents of my city?

My friends

Those who love me

Are they well?

 

شبِ قدر  پوچھا  مجھ سے  رضواں نے

اہلِ عرش تو خیر، اہلِ زمیں کیسے ہیں؟

And on that mysterious night

A being of light asked me

Those who are unseen are well

How are the dwellers of earth?

 

خبر سنتا ہوں رہزنوں کی مسافتوں میں

تو کارواں کیسے ہیں؟ سفین کیسے ہیں؟

I heard about robbers

On highways

So how are are caravans?

The armadas?

 

آپ  ہی جا  پوچھئیے رازدانِ فردا سے

وو آنے والے اصحابِ مبین کیسے ہیں

And you should go and visit

The holder of future secrets

And inquire of her

How will be those who are to come?

 

جو ہم نے کہا کے آپ ہمارے ہیں تو

چیخ کے بولے نہیں نہیں! کیسے ہیں؟

When I said to her

You are mine

She screamed and said

No! How is that possible?

 

شعر کہتے ہیں استاد پر عشق جانتے نہیں

ہاۓ ہاۓ کوئی دیکھو تو! ذہین کیسے ہیں

And he knows how to write

But does not know how to love

I am awed

By his supreme intelligence!

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry