Monthly Archives: May 2013

The beauty of the beloved… حسنِ یار

حسنِ یار  حسنِ ماہ  کا  مکمل  جواب  ہے

اس  کے  سامنے  قدرت بھی  لا جواب ہے

The beauty of the beloved

Is the perfect retort

To the beauty of the full moon

Nature does not have an answer to her magnificence

 

اس جدائی سے بہتر تو تیری جہنم ہی ہو گی

کے  اس  سے  دوری  میری،  یا رب  عذاب  ہے

I might be better off in hell

Than be separated

From her

My lord, this separation is a torture

 

کمال تیری قدرت اور مؤثر تیری رحمت

کے ترے اک  اشارے  پر، آتش گلاب ہے

The power you have

And the mercy you show

Effective and majestic

You turn fire to flowers

 

بڑی امیدوں سے شیخ جی رنگِ سیاہ لاے

سمجھے  علاجِ   پیری، انکا  خضاب  ہے

The old man buys black dye

With a lot of hope

He seems to think this dye

Will cure old age

 

کچھ اتنا  فرق تو نہیں ما و مایا میں

رنگِ  خدا بھی  اکثر،  رنگِ  آب  ہے

There isn’t much difference

between matter and water

The color of God

Oft looks like the color of water

 

کیا خورشید نے میری آنکھ خیرہ کی؟

یاں  حسنِ جلواگر کی،  تب و تاب ہے؟

Have I been dazed

By brilliant sunlight?

Or is the sight

Of the beloved that dazes me

 

عجب عشق و الفت کے کھیل ہیں جہاں میں

کے  جو  ہار گیا  میدان، وہی   کامیاب   ہے

The world

Has strange rules for love and longing

That those who lost the battle

Have won the war

 

یہی اشتہارِ عشق لگا درِ یار پے بیٹھا

جنسِ  دل  یہاں ارزاں، دستیاب  ہے

I hold a sign

At the door of the beloved

I am selling

My heart for cheap

 

کون انکاری  ہو گا استاد کی  اس  بات سے؟

مردوں میں کوئی مرد ہے، توبس بو تراب ہے

And who would disagree

On this point of mine

If there was ever a man amongst men

It was Hazrat Ali

Advertisements

6 Comments

Filed under Ghazal, Poetry

Why do they do it… کیوں کرتے ہیں

دل والے دل ٹوٹنے کے بعد، پیار کیوں کرتے ہیں؟

قریبِ  مرگ  جان  کو، بیمار  کیوں  کرتے  ہیں؟

Those who have a heart

Will love even if its broken

Why do they further ail?

That which is about to die

 

ملا نفرت بوتے ہیں، پھر چین سے کیسے سوتے ہیں

میری  گل نما  زمین  کو وہ، خار  کیوں کرتے ہیں؟

The mullah sows hate

But sleeps in peace

He turns my beautiful land

Into a land of thorns

 

فرقوں میں ہے امّت اور سوال ہے ہر فرقے کا

اس دور کے مسلم ہمیں، زنار کیوں کرتے ہیں؟

The notion is in discord

And each faction questions

Why do the others

Hate us so much?

 

جب  میرا دل بھی آپ کے خدا  کا گھر ہے تو

اس مسجدِ ویراں کو، مسمار کیوں کرتے ہیں؟

Is it not true

That my heart is a house for your God?

Then why do you seek to tear down

This abandoned house of God

 

دل  نہیں  دینا  تو نہ  دیں،  مرا  تماشا  تو  نہ  کریں

جو بات اپنے گھر کی تھی، سرِ بازار کیوں کرتے ہیں؟

Do not love me if you can not

It is not a compulsion

But do not make my sorrow

A street performance

 

معاملاتِ  عشق  کو  تجارت  نہ  بنایے  استاد

سوداِ جان تو نقد ہے، ادھار کیوں کرتے ہیں؟

Matters of love

Are not matters of trade

You must deal in real terms

Not credit

4 Comments

Filed under Ghazal, Poetry

An Interesting Situation… عجب معاملہ ہے

تیری دنیا میں رہتے کیسے رنگ باز، عجب معاملہ ہے

کوئی نیک کارساز کوئی بد کینہ ساز، عجب معاملہ ہے

What colorful characters

We see in the world

Some bright hard-workers

Others dark and malicious

 

اب   انہیں   توجہ   دیں   یاں   خدا   کو   سجدہ   کریں؟

اک طرف آمدِ یار اک طرف اذان کی آواز، عجب معاملہ ہے

Now should I entertain her

Or should I bow to God?

She came to my house

With the call to prayer

 

جانے کب عشق دیکھ لیا اس نے میری آنکھوں میں

نظر کیوں کھولتی ہے میرے راز؟ عجب معاملہ ہے

I do not know when

She saw love in my eyes

Why do my eyes

Reveal what my soul hides

 

کیا جو انہوں نے دل توڑا؟ ہم تو انہی سے پیار کرتے ہیں

بیوفائی  پے  بھی  اٹھائیں  ان  کے  ناز، عجب معاملہ ہے

So what if she broke my heart

I still am in love

Unjust to myself

I seek to please her

 

اک   نظر ڈال  کے  پسِ  پشت  پھینک  دیا

انھے دل دیا کے دی نیاز؟ عجب معاملہ ہے

She took one look

And tossed it aside

I gave her my soul

Not charity

 

اب  تو صفِ نمازِ عید  بھی بقدرِ حسب  بنتی  ہے

کہاں گئے وہ بندہ و بندہ نواز؟ عجب معاملہ ہے

Now even the lines for prayers

Are made according to social ranks

Whatever happened to equality?

To Ayaz and Ghaznawi?

 

صوفی و ملا کے مابین فرق کیسے سمجھاؤں تجھے؟

وہاں آلاتِ فساد تو یہاں مے و ساز، عجب معاملہ ہے

The difference between a sufi and a mullah

Is hard to understand

One side has the means for corruption

The other music and wine

 

استاد نے تو ایک عمر گناہوں میں گزاری یاروں

پھر کیوں بنتے ہیں آج پاکباز؟ عجب معاملہ ہے

He has spent

His life in sin

Why today

Does he present himself a pious man?

8 Comments

Filed under Ghazal, Poetry

More than what she was… بچھڑنے کے بعد

بچھڑنے  کے بعد  یہ  شدتِ  یاد؟  توقع  نہ  تھی

محبت مجھ سے جتنی ان کو تھی، مجھ کو نہ تھی

She appears more that what she was

In my memories after the parting

Perhaps

She loved me more than I loved myself

 

کیا فردِ جرم ڈالتے اس حسین  پری پے ہم

وہ تو دل کی چور تھی، کوئی ڈاکو نہ تھی

Under which law could I charge her?

That beautiful thief

She just stole my heart

Nothing more

 

گناہِ باہمی  پے  بے وجہ  ندامت  میری

کیا فکرِ نجات مجھ کو تھی، ان کو نہ تھی؟

A sin committed together

Yet I feel ashamed needlessly

Was I the only one

Worried about my judgement?

 

فقط اتنا فرق تھا مرنے اور جینے میں

گڑے ہم جہاں، وہ جاۓ وقوع  نہ  تھی

The key difference between

My death and life

Was that I was not buried

Where I was born

j

کمال  مقدر خدا  نے  اس  کا  لکھا  تھا  شاید

فکرِ رزق تو سب کو تھی، پر اس کو نہ تھی

What a wonderful fate

He has got writ from God

Everyone is worried about a livelihood

Not him

 

کیا سما ہو گا استاد با وقتِ وعدہِ الست

جب صداِ کن فیا  کن  کس کْو نہ تھی

And what a scene it would be

At the time of the first promise

When the sound of be and it was

filled the universe

 

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

What the wilderness lacks… ویرانے میں کم ہے

امیدِ بصارتِ  یارِ دیرینہ تو اس ویرانے میں کم ہے

صبر با رضاِ خدا لازم پر صبر دیوانے میں کم ہے

There is little hope

Of meeting an old friend in this wilderness

Patience is an enjoined virtue

Yet the madman lacks patience

 

شیرینیِ  گفتارِ  لبِ  یار  کی  کیا  بات  کریں  ہم؟

بات سننے میں جو مزہ ہے وہ بتانے میں کم ہے

And what do I say

About her sweet lips and her sweet words

The joy of listening to her

Is more than I could say

 

جو چنگاری کبھی روح کو اک شعلہ کرتی تھی

کیوں  آج  وہ دلِ مردہ  کو  گرمانے میں کم ہے

The spark

Which turned my soul to fire once

Fails today

To warm my heart

 

جانے کیوں وہ قصہِ یوسف سے اتنا شرماتے ہیں

لگتا تو ہے طویل و پیچیدہ پر سنانے میں کم ہے

Why does she shy away

From the story of Joseph

It sounds a complicated tale

But is quite short

 

زیادہ فرق تو نہیں خواہشِ عاشق و معشوق کے مابین

مزہ جو بات مان جانے میں ہے، منوانے میں کم ہے

There is no real difference

between the desire of the lover and the beloved

But the joy in accepting a demand

Is more than getting your demands accepted

 

کیا سبب کے اب جنوں کی پہلی سی طلب نہ رہی

کیا تیرا حسن آج آتشِ  شوق سلگانے میں کم ہے؟

What is the matter with you

That you can no longer induce madness?

Is your beauty

Failing to set hearts aflame?

 

با قدرِ ظرف  ہر نفس استاد  سے  رکھتا  ہے  ہمدردی

اُس کے رازداروں میں ہے زیادہ پر انجانے میں کم ہے

As much as they can

People sympathise with me

Those who know my secrets more than

Those who do not know me

 

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry

A creature of habit… عادت سے مجبور

مُلا کی رگِ جان کے لیے ناسور ہیں ہم

بغاوتِ واعظ میں تو مثلِ منصور ہیں ہم

I am a plague

For the strict mullah

Rebelling against the sermon

I am the like of Mansoor

j

بانسبت آپ کی  ہمیں  سب  دیوانہ  پکاریں

آپ کے پرستاروں میں کافی مشہور ہیں ہم

With regard to you

I am considered a fool

This makes me quite notorious

Amongst your admirers

 

کیوں نہ کافر ہو جائے کوئی تجھے دیکھ کر

تیری اک جھلک دیکھ کر شعلہِ طور ہیں ہم

One glance at you

Can cause a loss of faith

With one look you changed me

Into the flame that burns a mountain

 

خواجگانِ دور حاضر کی یہ ہے تعریف آخر

امن  و انسانیت  کے لئے  نرا  فتور  ہیں  ہم

The rulers of the times

May introduce themselves like so

For peace and humanity

We are a curse

 

میرے  ہی کیے  وعدے، مجھے کیوں  یاد آتے؟

کیا وعدے ہم نبھاتے؟ کوئی نیا دستور ہیں ہم؟

The promises I made

Keep coming back to my mind

How could I keep opposing words

Am I a new constitution?

 

شبِ ماہ میں ان کی، یہ تھی وجہِ وعدہ خلافی

پا بامہندی  ہیں  ہم، آنے  سے  معذور  ہیں  ہم

In a moonlit night her excuse

For not coming to see me

Was simple

I have henna on my feet

 

یہ کیا غضب کیا؟ استاد نے عشق چھوڑ دیا؟

اپنی ہم کیا کہیں؟ عادت سے مجبور ہیں ہم

What a sad terrible thing

He has stopped loving outright

As for me

I am a creature of habit

 

شام و سحر میری، سب تیری  عبادت  میں گذری

کمال اعزازوشرف میرا، کے تیرے مزدور ہیں ہم

My morn and evening

Is spent worshipping you

It is an honor

To be your slave

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry

Blinded… ہمیں دکھی نہیں

کوئی جگہ قابلِ مزار، سرِ راہ ہمیں دِکھی نہیں

تیرے در سے بہتر، کوئی جأ ہمیں دِکھی نہیں

I could not see a rightful place

For my mausoleum

Beyond your doorstep

I could not find a better place

 

تاریک رات میں صرف تیرا چاند چہرہ نظر اتا  ہے

تیرا ہی نور جلواگر ہے، شبِ  سیاہ  ہمیں دِکھی نہیں

In the darkness of night

I see your visage as the moon

Your light overpowering

Obscures the inky night

 

جب لہو طلب ہوا تو ہم نے اپنی رگیں کاٹ دیں

جنونِ تعمیل ایسا ہوا، رگِ جاں ہمیں دِکھی نہیں

Blood was demanded by the beloved

I started cutting my veins

The desire to obey her made me

Lose sight of the vein that carries life

 

متاںِ غرور  کے پیچھے  سب زمانے کو ہراساں دیکھا

غیروں پے احساں کی آج، رسم و راہ ہمیں دِکھی نہیں

I see the world chase worldly goods

But the tradition

Of showing grace to strangers

I could not see

 

دلِ بوسیدہ کی سب کتابیں آج الٹ پلٹ کے دیکھیں

سب مل گیا پر افسوس، تیری کتھا ہمیں دِکھی نہیں

I searched through the library of my heart

Found all my old books

What I could not find

Was your story

 

خدا  کی  رحمتوں کی طرف جو  ذرا توجہ کی

تو کوئی خواہش اپنی، لائقِ دعا ہمیں دِکھی نہیں

When I thought on

The kindness shown by God

I felt that no desire of mine

Was worth turning into prayer

کیا بات ہے استاد کی، اک  مجموعہِ  اصناف  ہے پر

کہتے ہیں لوگ اس میں، صنفِ وفا ہمیں دِکھی نہیں

There is a lot that can be said for him

He is a collection of qualities

Yet there are those who say

He has not the quality of fidelity

 

کاش ایسا ہو سکتا کے بس  تجھی  کو  تکتا  رہتا

کوئی یگانہ کوئی یکتہ، تیری ترا ہمیں دِکھی نہیں

I wish it could be so

I could keep looking at you

Brilliant, Singular

Like you I find none

3 Comments

Filed under Ghazal, Poetry