Tag Archives: idol

So what happened there?

ہم تو بھول گئے وہاں ہم پے کیا گزری

تم ہی کہ دو کے واں تم پے کیا گزری

I can not remember

What happened to me there

You tell

What did you go through?

 

کیا بتائیں کہ کیا ہوا ان کی محفل میں

حالِ دلِ خستہ؟ سرِ خم پے کیا گزری

And what could I explain

What happened in her presence

A heavy heart

A bowed head

 

پجاری سر پٹکتا ہے، کوئی پوچھتا نہیں

لوگ پریشاں ہیں کہ صنم پے کیا گزری

The pious man is in pain

And no one seems to care

They are all worried

About the stone idol

 

کب تک لکھا نصیب میں ہے اسکا جلنا

سوچتا ہوں اکثر، جہنم پے کیا گزری؟

How long is it fated

For it to burn

I wonder often

What crime did Hell commit?

 

جمشید  تو نہیں جانتا،  بس  جام  ہی بتا سکتا

چھٹا جو ہاتھ سے تو، جامِ جم پے کیا گزری

Jamshaid doesn’t know

Only the cup can tell

What happened to it

When it fell from his hand

 

وہی  بتا سکتا ہے  کچھ  درد جدائی کا

جو جانے بن سجنی، بلم پے کیا گزری

And only he can tell us

About the sorrow of parting

The one who knows what happens

To the lover without the beloved

 

یہ  کہانی  ہے  بڑی طویل و پیچیدہ سی

کون سمجھائے اولادِ آدم پے کیا گزری

It is a long

And complicated tale

Who can explain

What happened to the children of Adam

 

الہی کس  لیے  پیاسا رکھا  توں  نے حسین کو؟

مغضوب اک طرف، حاملِ کرم پے کیا گزری؟

And why did you keep

That blessed soul so thirsty?

The cursed one aside

Why where the blessed so tortured?

 

ہو نہ خوش اتنا استاد کے غم بھول جایئں

کیا  کہے گا؟  جانِ  غم  پے  کیا گزری؟

And do not be so happy

That you forget your sorrow

What will you tell the people?

What happened to the soul of sorrow?

Advertisements

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

The Royal…

ان  کا  قیام  ہوا  تو،  تھے  سفر  میں  ہم

بازار وہ گئے جب، تو انکے گھر میں ہم

When she stopped

I remained a traveller

When she went to the bazar

I found myself at her house

 

وعدہ کیا تھا خود سے، بچنا تھا اس بت سے

کیوں  آ  گئے  دوبارہ،  فریِبِ  نظر  میں ہم

I promised myself

That I would avoid that false idol

Then why

Did her sight beguile me?

 

الزام لگا، تہمت لگی، ذلّت ملی، دھتکار ہوئی

رسوا  بہت  ہوۓ،  تیری  رہگزر  میں  ہم

Accusations, blame

Ignominy and disgrace

I gained a lot

By coming across you

 

سلوکِ دیرینہ ہے یوں افلاک کا ہم سے

وہ ظلم کرتے جاتے، محو صبر میں ہم

And it is the usual way

In which the stars treat me

The punish me

I suffer in silence

 

ابھی تلک یاد ہے وہ ان کی چاراجوئی

آج  پھر  روے  غمِ  چاراگر  میں  ہم

I still remember

The kindness she showed me

I am reminded of that often

And It brings tears to my eyes

 

مہلتِ توبہ دے رب، اس دن تک بس

اتریں گے جس روز اپنی قبر میں ہم

My Lord give me time

To recant my sins

Till the day

I am put into my grave

 

ہمیں  تو  لفظوں  کو  معنی دیتے ہیں

زیر میں بھی ہم ہیں اور زبر میں ہم

And we give meaning

To all words

In the low ones

As well as the most high

 

سپاہ گر و محنت کش رہے ہم ہمیشہ

تلوار میں ہمیں تھے اور تبر میں ہم

I was a warrior

And I was ever a hard worker

I found myself in the sword

And in the ax

 

یاد نہیں کب سے ملاقات ہے آپ سے

ہوش  میں  تب  تھے  اب خمر میں ہم

I do not remember

For how long I have known you

I was sober then

But feel drunk now

 

ڈھونڈا نہ کہاں تک؟ وہ صنم بے دھڑک

کلیسا گئے  کبھی  خدا کے گھر میں ہم

And I went to so many places

To find that idol

I went to the cathedral

I went to the mosque

 

نہ منزل،  نہ نشانِ  منزل،  نہ گمان

چل پڑے ہیں یوں کس ڈگر میں ہم؟

No destination nor a sign of it

Not even a false hope

That I’d ever reach it

Then why do I walk on?

 

جیتے جی تو استاد سے ملنا نہیں ہو گا

ملیں گے اس سے میدانِ حشر میں ہم

And I doubt

That I’ll see him in this life

Perhaps I will meet him

On the day of judgement

 

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry