Tag Archives: words

Secret Words

یہ  وسعتِ  افلاک،  یہ  خاموش  نظارے

ہیں میرے تخیر میں ستارے بھی سیارے

 

الف   و  لام   و  میم،   طہٰ   و  یٰسین

راز ہیں خدا کے،  میرے نہ  تمہارے

 

کاش یہ بھی ہو سکتا، ہو علم کا یہ راستہ

مشرق کے مدرسہ میں مغرب کے ادارے

 

نہ مانے بات حق کی، ہو محظ اک فسادی

اس  طرز  کے سفاکی، نہ  ہم  نہ  ہمارے

 

وہی  دیانتِ  حجر،  ہم  پھر  سے  دربدر

اک بار پھر سفر؟ پھر عشق پے ابھارے؟

 

کیا عشق کیا ہم نے؟ اک قرض لیا ہم نے

محبت بھی ادھاری تھی، دل بھی ادھارے

 

اک خواہش جاگتی ہے، وہ  نظر مانگتی  ہے

وہ گلے سے لگا لے، میری  زلف  سنوارے

 

استاد ذرا  یہ  بتا ، غایب   تھا   کل   کہاں؟

کیا توں نے پھر کہیں؟ کچھ پھول نکھارے؟

The void of space

Broken by magnificent visions

In my mind

Still objects have motion

 

The secret words

The words of power

These words are God’s secrets

They do not belong to either of us

 

I wish there was a way

To learn

From a school in the east

Which leads to the west

 

They are neither mine

Nor am I one of them

Those who do not accept the truth

But persist in falsehood

 

An honest parting

Has left me homeless

So lets travel again

Let us love again

 

So what was that love?

Nothing more than a loan

A borrowed heart

Borrowed words

 

My desires

Seek a vision

One that I may embrace

One that can cleanse me

 

So let me ask him

Where he was yesterday

What has he been up to?

Something mischievous?

Advertisements

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

In Hope…

دیر سے سہی،  پیام  آنے  کی  امید  تو  ہے

جھوٹی سہی، دل کو قیام آنے کی امید تو ہے

 

ہر حسین کے ہاتھ میں اک شمع روشن ہے

آج  دلِ  خستہ  کو جلانے  کی  امید تو ہے

 

سنا  کے  اس  کی  باتیں  بہت  نشیلی  سریلی

اس سر شناس سے سر ملانے کی امید تو ہے

 

سنا کے آپ نظر سے تقدیر بدلتے ہیں

ہمیں بھی یہ انعام پانے کی امید تو ہے

 

مانا زیست کچھ نہیں ماسوا جبرِ مسلسل

چلو پھر زیست سے جانے کی امید تو ہے

 

ہرچند  استاد میری بات سن  مسکرا اٹھا

اس سنگدل صنم کو رلانے کی امید تو ہے

 

It might be some time

But I hope to hear from her

It may be a false hope

But it is a hope

 

I see beautiful faces all around me

And every man carries a flame

I hope someone

Will set fire to my heart today

 

And I’ve heard her words

Intoxicating and Harmonious

I hope to breath

In harmony with her

 

I have been told

You can change fates with just a look

I too hope for

The same reward

 

Fine, I admit it

Life is nothing but suffering

I hope that one day

This suffering will end

 

And even though he laughed

When he heard my words

One day I hope

To move him to tears

 

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

Remembrance

جو کوئی بات دکھاتی ہے، وہی یاد آتی ہے

سرد  رات  ستاتی  ہے،  وہی یاد آتی ہے

When something hurts me

I am reminded of her

Winter nights

Remind me of her

 

بارہا چاند  میں  بھی  نظر  آتی  ہے

چاندنی لبھاتی ہے، وہی یاد آتی ہے

Oftimes, I see her in the moon

I like the moonlight

Though it does

Remind me of her

 

غور  سے  دیکھی  نہرِ جان  کی روانی

موجِ غم آتی جاتی ہے، وہی یاد آتی ہے

I see the river of time

Waves of joy and sorrow

One after the other

Remind me of her

 

رو رو نکال دوں زندگی سے یاد اسکی

زندگی  رلاتی  ہے،  وہی  یاد  آتی ہے

I would have wept away

Her memory

Sadly the tears

Bring back more memories

 

ایسے ہی کسی موسم میں ہم ملے تھے

یہ  رت  جلاتی  ہے،  وہی یاد آتی ہے

I remember it was similar weather

When we met

I hate this weather now

It reminds me of her

 

کاوش کی بھولنے کی غمِ دنیا لے کے

ایسے یاد جاتی ہے؟  وہی یاد آتی ہے

So I tried to forget her

Looking at the world’s sorrows

It was a fool’s errand

It does not remove memories

 

یہ غزل  ختم  تو  محفل  ختم  استاد

شمع ٹمٹماتی ہے،  وہی یاد آتی ہے

The words end

And so do the night’s revelries

The candle flickers

It reminds me of her

 

7 Comments

Filed under Ghazal, Poetry

The Royal…

ان  کا  قیام  ہوا  تو،  تھے  سفر  میں  ہم

بازار وہ گئے جب، تو انکے گھر میں ہم

When she stopped

I remained a traveller

When she went to the bazar

I found myself at her house

 

وعدہ کیا تھا خود سے، بچنا تھا اس بت سے

کیوں  آ  گئے  دوبارہ،  فریِبِ  نظر  میں ہم

I promised myself

That I would avoid that false idol

Then why

Did her sight beguile me?

 

الزام لگا، تہمت لگی، ذلّت ملی، دھتکار ہوئی

رسوا  بہت  ہوۓ،  تیری  رہگزر  میں  ہم

Accusations, blame

Ignominy and disgrace

I gained a lot

By coming across you

 

سلوکِ دیرینہ ہے یوں افلاک کا ہم سے

وہ ظلم کرتے جاتے، محو صبر میں ہم

And it is the usual way

In which the stars treat me

The punish me

I suffer in silence

 

ابھی تلک یاد ہے وہ ان کی چاراجوئی

آج  پھر  روے  غمِ  چاراگر  میں  ہم

I still remember

The kindness she showed me

I am reminded of that often

And It brings tears to my eyes

 

مہلتِ توبہ دے رب، اس دن تک بس

اتریں گے جس روز اپنی قبر میں ہم

My Lord give me time

To recant my sins

Till the day

I am put into my grave

 

ہمیں  تو  لفظوں  کو  معنی دیتے ہیں

زیر میں بھی ہم ہیں اور زبر میں ہم

And we give meaning

To all words

In the low ones

As well as the most high

 

سپاہ گر و محنت کش رہے ہم ہمیشہ

تلوار میں ہمیں تھے اور تبر میں ہم

I was a warrior

And I was ever a hard worker

I found myself in the sword

And in the ax

 

یاد نہیں کب سے ملاقات ہے آپ سے

ہوش  میں  تب  تھے  اب خمر میں ہم

I do not remember

For how long I have known you

I was sober then

But feel drunk now

 

ڈھونڈا نہ کہاں تک؟ وہ صنم بے دھڑک

کلیسا گئے  کبھی  خدا کے گھر میں ہم

And I went to so many places

To find that idol

I went to the cathedral

I went to the mosque

 

نہ منزل،  نہ نشانِ  منزل،  نہ گمان

چل پڑے ہیں یوں کس ڈگر میں ہم؟

No destination nor a sign of it

Not even a false hope

That I’d ever reach it

Then why do I walk on?

 

جیتے جی تو استاد سے ملنا نہیں ہو گا

ملیں گے اس سے میدانِ حشر میں ہم

And I doubt

That I’ll see him in this life

Perhaps I will meet him

On the day of judgement

 

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

Then I cried a lot…

میں  درِ رحماں  گیا،  جا  کر بہت رویا

پھر واپس میکدے میں، آ کر بہت رویا

I went to the house of worship

I cried a lot there

Then I came back to the tavern

And cried a lot there

 

جب آے یاد مجھ کو، گناہ سارے کل کو

خدا کے آگے سر، جھکا  کر بہت رویا

And yesterday

I recounted all my sins

I bowed my head before God

And cried a lot for forgiveness

 

اقرارِ  عشق  پے  وہ  کچھ  بدل سی گئی

جو بات نہ سنانی تھی، سنا کر بہت رویا

On the confession of love

Things changed

The words I was not supposed to say

Made me cry a lot once I had said them

 

جو  ترے  سامنے  رونا  ممنوع ٹھہرا

تو میں چراغِ  شام، بھجا کر بہت رویا

And hopelessness

Is forbidden before you

So I turned out the lights

And cried in the darkness

 

قسم  یاد تھی ان کے آگے نہ رونے کی

ان  سے  اپنا چہرہ ، چھپا کر بہت رویا

I swore

I would not cry

Before her

So I hid my face before shedding tears

 

جو  تجھ  سے  دوری ہی  میرا مقدرٹھہرا

میں اپنے ہاتھ اپنا کفن، سجا کر بہت رویا

If I am destined to be

Away from you

I will decorate my burial shroud

And cry as I do it

 

جانتا  تھا  کے  اسی راستے سے آئیں گے

سرِ رہگذر ان سے نظر، ملا کر بہت رویا

I knew she would walk

Upon this path

I wept uncontrollably

When I met her gaze

 

امتحانِ عشق ہی تو تھی میری جاں طلبی

وہ  یوں  میرا عشق، آزما  کر بہت رویا

And he wanted

To take my life as a test of love

He cried a lot

After testing my love

 

کیسے اسے معاف نہ کرتا؟ دل صاف نہ کرتا؟

کے وہ کافر ادا میرا دل،  دکھا  کر  بہت رویا

And how could I not forgive him?

How could I hold a grudge?

He cried a lot

After hurting me

 

عاشقی صبر طلب سہی غالب پر میں تو

شکوہ کر، شکایت کر، گلہ کر بہت رویا

As per the words of Ghalib

Love demands patience

Yet I cry a lot

With laments, complaints, plaints

 

ایک دریا لیے پھرے، استاد اپنی آنکھوں میں

ان  کو  اپنا  زخمِ  دل،  دکھا  کر  بہت  رویا

You’ll find a river in his eyes

As he cries

While he shows

The wounds on his heart

Leave a comment

Filed under Uncategorized

I can not really say…

کیوں  آے  اس  جہاں  سے؟ کچھ کہ نہیں سکتے

کب جائیں گے ہم جاں سے؟ کچھ کہ نہیں سکتے

Why did I come into this world?

I can not really say

And when will I depart

I do not know

j

تھے ہم بھی بہشت میں، خدا کی پرورش میں

نکلے  کیوں  وہاں سے؟ کچھ کہ نہیں سکتے

And I was once in heaven

In the company of gods

Then why did I leave that realm?

I can not really say

j

ہے  یاد  آپ  کو  اپنی؟  عادتِ  خوش  گوئی

کیوں آپ آج مجھ سے، کچھ کہ نہیں سکتے؟

And do you remember

You sweet manner of speech

Can you please say

Something like you used to?

j

توں  لاجواب  کرتا ہے، نیت  خراب  کرتا ہے

بات ہوتی نہیں تجھ سے، کچھ کہ نہیں سکتے

You make me lose my words

And lose my thoughts

I can not focus

I can not talk

j

جو  بولنا ہے بولو، خاموش  یوں نہ بیٹھو

حیف نظری دلاسے؟ کچھ کہ نہیں سکتے؟

Speak whatever you have to say

Do not sit silently

What use are these longful looks?

Why don’t you use your words?

j

بہت  کچھ  کہنا  تھا،  راز  کوئی  کھولنا  تھا

پھر آج کیوں ہم اس سے، کچھ کہ نہیں سکتے؟

And I had a lot to say

To admit my faults

Yet I could not speak

I do not know why

j

ضروت تو انسانوں کی، آنکھوں میں بولتی ہے

خاموش بکھرے قآصے، کچھ  کہ  نہیں  سکتے

A beggar’s desires

Are obvious in his eyes

A silent begging bowl

Does not speak

j

کبھی تم بھی بولتے تھے، ووہی جو سوچتے تھے

استاد  پھر  اس طرح سے، کچھ کہ نہیں سکتے؟

And there was one a time

When you said what you thought

Why do you not

Continue to live the same way?

2 Comments

Filed under Ghazal, Poetry

Left Behind…

لفظ سارے ہمارے، سلام میں رہ گئے

راز  تو  بہت  تھے، پیام میں رہ گئے

I had to say a few things

But I could not go beyond a greeting

There was a lot I had to share

The content of my message was lacking

 

ہاں  کیا  تھا  اک  وعدہ،  سجدہِ  سہو  کا

سجدے تک کہاں پہنچے؟ قیام میں رہ گئے

And I had made a promise

To rectify my errors

I could not come to a prostration

I was left standing apologetically

 

جوش ایسا تھا کے جہاں سے لڑ جاتے

ارادے تو تلوار تھے، نیام میں رہ گئے

In rage

I could have fought the world

But my intentions

Became swords left in scabbards

 

کیا  بتاؤں  اب  تجھے  میں  اس  امت کا حآل؟

کچھ کفر میں رہ گئے، کچھ اسلام میں رہ گئے

And what do I tell you

About the people

Some are lost in disbelief

Others lost in their beliefs

 

تری اطاعت سے ہی تو نفس صاف ہوا میرا

جنسِ  مروت  و  وفا،  غلام  میں  رہ  گئے

And it was only in obedience to you

That I found guidance

Love and faith

Are all that I have

 

نا  جانے  وہ  کب آے  اور کب چل دیے

ہم  ان  کے  آنے  کے انتظام میں رہ گئے

I do not know

Whence she came or left

I was too busy

Making plans for her visit

 

اب  تو  وہ  نگاہیں  بھی  نہ ملائیں ہم سے

کبھی  ہم  خاص  تھے، عوام  میں رہ گئے

And now she does not even

Look upon me

I was special once but now

I am a part of the masses

 

حکمِ  قاضی  ہوا کے  پڑھ  حافظ وخیام

حافظ تک کون جائے؟ خیام میں رہ گئے

And the judge told me

To study Hafiz and Khayam

Who can get to the philosophy of Hafiz?

The ecstasy of Khayam enthralls me

 

حرفِ  وَلَا تَفَرَّقُو  تو  سنا تھا پر ہم

فرقہ بندی و تلاشِ امام میں رہ گئے

Yes we recall the command

To not form groups within the body

But we became too engaged

In finding a leader and making groups

 

یہ  بھی  سنا ہے بارہِ  استاد  ہم نے

آدمی  تو  نیک پر کلام میں رہ گئے

And I have heard this

About him

Although he is a nice man,

His words leave a lot to be desired

 

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry