Tag Archives: zakham

The both of us

آج بازار برہم کریں؟ ہم بھی تم بھی

نیلامیِ  قلم  کریں؟ ہم  بھی  تم بھی

Should we rouse

A passion somewhere?

Should we both

Put up our pens for bidding?

 

خود پے ظلم کریں ہم بھی تم بھی

جاں پہ ستم  کریں ہم بھی تم بھی

Both of us

Torture ourselves

Hurt ourselves

The both of us

 

تم جاؤ خداخانہ، ہم باسیِ میخانہ

جستجوِ علم کریں ہم بھی تم بھی

You go to the temple

I towards the tavern

We both seek

Knowledge

 

تلاش ہے کسی کی، نظرِ بےطرح کی

خواہشِ  الم  کریں   ہم  بھی  تم  بھی

We seek a vision

Like no other

A sorrow

Sought by us both

 

دعا کرتے ہیں علاجِ عشق کے لیے

دم  پے دم  کریں  ہم  بھی  تم  بھی

And we pray

For a cure

For love

A prayer repeated often

 

پتھروں میں رب نہیں تو پھر کیوں

خدا  صنم  کریں  ہم  بھی  تم بھی

And if there is no spirit

In stones

Why do we become so connected

To those rocks?

 

جو بھر گئے ہیں تیرے دل کے گھاؤ

نیا  زخم  کریں؟  ہم  بھی  تم  بھی

If your earlier wounds

Have healed

Should you and I

Make new ones?

 

یہ کیا ستم کیا؟ کیوں درد عیاں کیا

تلاشِ غم کریں؟ ہم  بھی  تم  بھی

Oh come now!

Why did you tell me

About your sorrow

Now find a new misery

 

استاد  اور کیا؟   کہنا  باقی  رہا

گفتگو ختم کریں؟ ہم بھی تم بھی

So What is left?

Yet unsaid?

Should we stop talking

The both of us?

 

Advertisements

Leave a comment

Filed under Ghazal