Tag Archives: temple

A Strong Desire

کسی طرح تو یہ میرے دل کا ارماں نکلے

زباں صنم کا نام لے، منه سے خدا نکلے

I wish

That if I ever say

The name of the beloved

It comes out as God

 

سفرِ حجازی میں تھے کے بتکدہ آ نکلے

کہاں  جانا  تھا  ہمیں  اور  کہاں آ نکلے

On my way to the holy sites

I found myself in a temple of lies

Where was I supposed to go?

Where am I now?

 

سنبھل کے فتوے دے کہیں ایسا نہ ہو

جس کو جانو گنہگار وہی باصفا نکلے

And be careful

In passing judgements

What you consider sin

Maybe a virtue

 

طالبِ معجزہ ہیں اقوام پھر موسیٰ  سے

کے یدِ بیضا اور بھی دراخشاں نکلے

The tribes demand

Another miracle from Moses

The want the brightness

To be brighter yet

 

یہ آرزو بھی تمہاری پوری ہوئی استاد

اس نے ٹوٹ کے چاہا تمہی بیوفا نکلے

This wish was also fulfilled

She loved you

With all her heart

You couldn’t keep up with it

 

Advertisements

Leave a comment

Filed under Uncategorized

The Place

کسی  جگہ  خدا کا  مقام  تو ہو گا

دار و طور نہیں تو لبِ بام تو ہو گا

I hope to find her

Somewhere

Perhaps on the cross or Mount Sinai

Maybe even the edge of a window in the sky

 

یہ  تنبیہ تھی  مرے چاہنے والوں کی

شروع کر تو شاعری ، بدنام تو ہو گا

And such was the warning

From those who love me

Start writing

You will be infamous

 

مسجد سے باہر کیا ہمیں تو کیا ہوا؟

اب سایہِ مسجد میں  آرام تو ہو گا

Does it really matter

If I am asked to leave the temple

At least now I can find peace

In the shade offered by that building

 

لے چلو مجھے آسماں کے کنارے

رازی تو شاید نہ ہو، خیام تو ہو گا

Now take me

To the edge of the sky

I may not find Raazi

But Khayam will certainly be there

 

لاکھ پردے میں ملے تو بھی ٹھیک ہے

نظارہِ یار  نہ سہی،  کلام  تو  ہو  گا

A thousand veils

Do not matter

I may not see her

But I can talk to her

 

آؤ اب  کاغذ  کو  ہی  قاصد بنا لیں

کلام بھی جانے دو، سلام تو ہو گا

So lets make these words

My message

I may not hear back

By my voice carries to her

 

پشیمانی ان کو ہے میرے قصّے سے

فسانہِ  بدنامی  ہے، عام  تو  ہو  گا

Someone is ashamed

Of my story

It is a tale of infamy

It does become public

 

تو پھر چلیں استاد محفلِ اغیار میں؟

سکونِ جاں نہ سہی، جام تو ہو گا

So shall we proceed

To the gathering of strangers

I may not find peace there

But I might find some wine

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

The both of us

آج بازار برہم کریں؟ ہم بھی تم بھی

نیلامیِ  قلم  کریں؟ ہم  بھی  تم بھی

Should we rouse

A passion somewhere?

Should we both

Put up our pens for bidding?

 

خود پے ظلم کریں ہم بھی تم بھی

جاں پہ ستم  کریں ہم بھی تم بھی

Both of us

Torture ourselves

Hurt ourselves

The both of us

 

تم جاؤ خداخانہ، ہم باسیِ میخانہ

جستجوِ علم کریں ہم بھی تم بھی

You go to the temple

I towards the tavern

We both seek

Knowledge

 

تلاش ہے کسی کی، نظرِ بےطرح کی

خواہشِ  الم  کریں   ہم  بھی  تم  بھی

We seek a vision

Like no other

A sorrow

Sought by us both

 

دعا کرتے ہیں علاجِ عشق کے لیے

دم  پے دم  کریں  ہم  بھی  تم  بھی

And we pray

For a cure

For love

A prayer repeated often

 

پتھروں میں رب نہیں تو پھر کیوں

خدا  صنم  کریں  ہم  بھی  تم بھی

And if there is no spirit

In stones

Why do we become so connected

To those rocks?

 

جو بھر گئے ہیں تیرے دل کے گھاؤ

نیا  زخم  کریں؟  ہم  بھی  تم  بھی

If your earlier wounds

Have healed

Should you and I

Make new ones?

 

یہ کیا ستم کیا؟ کیوں درد عیاں کیا

تلاشِ غم کریں؟ ہم  بھی  تم  بھی

Oh come now!

Why did you tell me

About your sorrow

Now find a new misery

 

استاد  اور کیا؟   کہنا  باقی  رہا

گفتگو ختم کریں؟ ہم بھی تم بھی

So What is left?

Yet unsaid?

Should we stop talking

The both of us?

 

Leave a comment

Filed under Ghazal