Tag Archives: sitaray

Secret Words

یہ  وسعتِ  افلاک،  یہ  خاموش  نظارے

ہیں میرے تخیر میں ستارے بھی سیارے

 

الف   و  لام   و  میم،   طہٰ   و  یٰسین

راز ہیں خدا کے،  میرے نہ  تمہارے

 

کاش یہ بھی ہو سکتا، ہو علم کا یہ راستہ

مشرق کے مدرسہ میں مغرب کے ادارے

 

نہ مانے بات حق کی، ہو محظ اک فسادی

اس  طرز  کے سفاکی، نہ  ہم  نہ  ہمارے

 

وہی  دیانتِ  حجر،  ہم  پھر  سے  دربدر

اک بار پھر سفر؟ پھر عشق پے ابھارے؟

 

کیا عشق کیا ہم نے؟ اک قرض لیا ہم نے

محبت بھی ادھاری تھی، دل بھی ادھارے

 

اک خواہش جاگتی ہے، وہ  نظر مانگتی  ہے

وہ گلے سے لگا لے، میری  زلف  سنوارے

 

استاد ذرا  یہ  بتا ، غایب   تھا   کل   کہاں؟

کیا توں نے پھر کہیں؟ کچھ پھول نکھارے؟

The void of space

Broken by magnificent visions

In my mind

Still objects have motion

 

The secret words

The words of power

These words are God’s secrets

They do not belong to either of us

 

I wish there was a way

To learn

From a school in the east

Which leads to the west

 

They are neither mine

Nor am I one of them

Those who do not accept the truth

But persist in falsehood

 

An honest parting

Has left me homeless

So lets travel again

Let us love again

 

So what was that love?

Nothing more than a loan

A borrowed heart

Borrowed words

 

My desires

Seek a vision

One that I may embrace

One that can cleanse me

 

So let me ask him

Where he was yesterday

What has he been up to?

Something mischievous?

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

Scorched Earth

کچھ  کر  کے  جانا ہے،  دکھ کو مٹانا ہے

ہم دوست تو سب کے ہیں، دشمن زمانہ ہے

I must kill the misery

Before I leave

I am a friend to all

Yet the times are hateful

 

یہ دن و رات کا سفر، یہ ستاروں کا محور

پھر قیامت کا وعدہ ہے، عجیب تماشا ہے

The rotation of the planets

The paths laid out for stars

The absurd promise that one day

It will all end

 

مل کے بچھڑ گئے، بچھڑے تو مر گئے

چھوٹی سی اک بات کا، طویل فسانہ ہے

A meeting and then parting

The parting leading to death

A small matter

A long story

 

دل  ہی  تو ٹوٹا ہے،  کیا عرش بکھرا ہے؟

ہم مان چکے کب کے، بس تم کو منانا ہے

It is just a broken heart

Not the heavens torn asunder

I have come to acceptance

Are you there yet?

 

مندر میں ہوں برہمن تو مسجد میں مسلمان

میں اور کیا بنوں گا؟  کیا کس نے بنانا ہے

I am a Brahmin in the temple

A Moslem in the mosque

What else am I to be

What else will I be?

 

لبِ استاد  پے  رہتی،  مسکان  تو ہلکی سی

دل کھول کے دیکھو تو، تپتا ہوا صحرا ہے

And yes he smiles

You can see it on his lips

If you look in his heart

You’ll find a burning desert

 

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry