Tag Archives: seeking

The both of us

آج بازار برہم کریں؟ ہم بھی تم بھی

نیلامیِ  قلم  کریں؟ ہم  بھی  تم بھی

Should we rouse

A passion somewhere?

Should we both

Put up our pens for bidding?

 

خود پے ظلم کریں ہم بھی تم بھی

جاں پہ ستم  کریں ہم بھی تم بھی

Both of us

Torture ourselves

Hurt ourselves

The both of us

 

تم جاؤ خداخانہ، ہم باسیِ میخانہ

جستجوِ علم کریں ہم بھی تم بھی

You go to the temple

I towards the tavern

We both seek

Knowledge

 

تلاش ہے کسی کی، نظرِ بےطرح کی

خواہشِ  الم  کریں   ہم  بھی  تم  بھی

We seek a vision

Like no other

A sorrow

Sought by us both

 

دعا کرتے ہیں علاجِ عشق کے لیے

دم  پے دم  کریں  ہم  بھی  تم  بھی

And we pray

For a cure

For love

A prayer repeated often

 

پتھروں میں رب نہیں تو پھر کیوں

خدا  صنم  کریں  ہم  بھی  تم بھی

And if there is no spirit

In stones

Why do we become so connected

To those rocks?

 

جو بھر گئے ہیں تیرے دل کے گھاؤ

نیا  زخم  کریں؟  ہم  بھی  تم  بھی

If your earlier wounds

Have healed

Should you and I

Make new ones?

 

یہ کیا ستم کیا؟ کیوں درد عیاں کیا

تلاشِ غم کریں؟ ہم  بھی  تم  بھی

Oh come now!

Why did you tell me

About your sorrow

Now find a new misery

 

استاد  اور کیا؟   کہنا  باقی  رہا

گفتگو ختم کریں؟ ہم بھی تم بھی

So What is left?

Yet unsaid?

Should we stop talking

The both of us?

 

Leave a comment

Filed under Ghazal

Whether you do or do not… کریں یاں نہ کریں

 

حالِ  دل  کی  خبر، کریں یاں نہ کریں؟

اس مقام سے سفر، کریں یاں نہ کریں؟

Do I dare discover

What I feel

Or should I walk on

Without scratching the surface?

 

کیا بتاؤں چاراگر کو، میں چلا  اب کدھر کو

میری غمخاری چاراگر،  کریں یاں نہ کریں؟

And what do I say to her?

Who seeks to comfort me?

Perhaps my sorrows

Will hurt her more?

 

اس چاکِ دل جگر کو، اک چاہیے کاریگر

تو ہم تلاشِ کاریگر، کریں یاں نہ کریں؟

The graces I lack

Require a competent teacher

So should I seek one out?

Or not?

 

کہو تو حالات سے سمجھوتہ کریں یا کہو

حالات پے گزر بسر، کریں یاں نہ کریں؟

And if you tell me to

I shall make the compromise

So tell me

Should I?

 

آئینہ بن بیٹھا ہوں، میں ان کے سامنے

اب وہ ہم پے نظر، کریں یاں نہ کریں

I have transformed myself

Into a mirror

I do not care

If she looks at me or not.

 

ہر بات مجھ کو انکی، اک معجزہ لگی

وہ  کام  پرہنر، کریں  یاں  نہ  کریں

And every thing she does

Contains a miracle within it

It does not matter to my eyes

If her acts are mundane

 

بس لفظ ہی تو ہیں، جو میری وراثت ہیں

یہ  لفظ  کوئی  اثر،  کریں  یاں  نہ کریں

Words

Are all that I have inherited

I give them to you

Without a care as to their impact

 

کیا  اجر  ملا تجھے؟ بتوں  کو  پوج  کے؟

اب وہی کام بے اجر، کریں یاں نہ کریں؟

And what did you gain

From worshiping falsehood?

The same thankless engagements?

Would you like to pursue them again?

 

شائد خدا  سنتا  نہیں مشائخ کی آج کل

یاں وو دعا پراثر، کریں یاں نہ کریں

Perhaps God does not listen

To the pious men of today

Or maybe

Their prayers do not have the same strength

 

جی بس کچھ ایسے ہی ہیں احوالِ ملک

حالات پے آپ صبر، کریں یاں نہ کریں

And yes, It is the way of the land now

It really does not matter

If these ways

Are unacceptable to you

 

استاد تھک گئے، قافلے والے نکل گئے

آرام زیرِ سایہِ شجر؟ کریں یاں نہ کریں؟

I have grown tired and old

My companions left me behind

I should find a shady tree

And perhaps rest for a while under it

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry