Tag Archives: searching

What I can not find…

پارسا تو ملتے بہت، انساں نہیں ملتا

اس جیسے ملتے بہت، عثماں نہیں ملتا

 

روسیاہ ہی ہو گے راکھ کرید کے

جلتے ہوے گھر سے ساماں نہیں ملتا

 

جب ملا ہم کو سات پردوں میں ملا

رازِ حیات ہمیں، عریاں نہیں ملتا

 

وضو کیا تو کیا؟ سجدہ کیا تو کیا؟

یوں سر پٹخنے سے، ایماں نہیں ملتا

 

بہت دنوں سے ہے تلاطم کی جستجو

ہر طرف سکوت ہے، طوفاں نہیں ملتا

 

منفرد ہیں میر، غالب، فیض و فراز

ایک سے دوسرے کا، دیواں نہیں ملتا

 

ایک اور سبکی استاد نے برداشت کی

تیری طرح ضبط کا خواہاں نہیں ملتا

Pious people are everywhere

Yet I can not find a man

I find many like him

But not him

 

This search

This inquisitiveness is useless

You can not find your belongings

In a house that burnt down

 

And whenever I discovered the secret

It was shrouded in many layers

I could not find

The naked truth

 

I performed the rituals

Abulutions

Slammed my head against the floor

And could not find faith

 

I seek the tumult

Been searching for it

Stillness everywhere

Not a storm in sight

 

The poets and the thinkers

The guides

All have their uniqueness

Unquestioned

 

And so he suffers

Another insult

I find none like him

Who preach patience

Advertisements

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

The search for death… تلاشِ مرگ

تلاشِ مرگ ابعث، شہرِ جاناں سے چلنا سہی ہے

یاں  توں  ہی بتا اے دل،   در در  پھرنا سہی ہے؟

The search for death

Is useless

Or tell me my heart

Is it ok to go from door to door searching for it?

j

کتنی بہاریں اور دیکھنی ہیں اداس آنکھوں سے؟

دورِ خزاں  ہے عمر کا،  جہاں  سے چلنا سہی ہے

How many more springs

Will you see with your sad eyes?

Fall has arrived

Its time to leave the world

j

اس کے ہمنشین ہونے سے، آج  نشہ سا ہو گیا

نشے میں غلطی ہوئی، نشے میں گرنا سہی ہے

I felt intoxicated

While sitting with her

We made mistakes while intoxicated

I fell when I was inebriated

j

پاواشِ جرمِ عشق  میں   پھر  عدالت  گئے تو

حکمِ قاضی یہی تھا کے، تیرا مرنا سہی ہے

I was accused of falling in love

By the courts and the qazi

The punishment as always

Was death

j

ہاتھوں میں وہ خنجر لئے گھومتی پھرتی ہے

ابھی کچھ دیر ٹک بیٹھ، چھپے رہنا سہی ہے

She stalks you

With daggers drawn

Sit down here

Hide for a while

j

نفسِ امارہ و مطمین یکجان بھی ہوتے ہیں

کچھ  غلط  بات تو نہیں، انکا ملنا سہی ہے

The heart that seeks

And the one which is happy

Can be possibly found

In the same body

j

کیا  کیا  نہ کہا  انہوں  نے  آج  ہمارے  آگے

ہم نے بس اتنا ہی کہا، آپ کا کہنا سہی ہے

What was I not accused of

By her today

And all I could say was

You are right

j

فطری  سے تو احکام  ہیں تیرے  مذہب  کے

دل جانتا ہے تیرا, کیا غلط اور کیا سہی ہے

The orders of your faith

Are quite natural

And your heart knows

Right from wrong

j

تعرف  ہمارا اس طرح  سے دوست  کرتے  ہیں

استاد ذرا دیوانہ سا ہے، آدمی ورنہ سہی ہے

My friends introduce me

By saying

He is a little mad

But otherwise he is a good man

2 Comments

Filed under Ghazal, Poetry