Tag Archives: raat

Scorched Earth

کچھ  کر  کے  جانا ہے،  دکھ کو مٹانا ہے

ہم دوست تو سب کے ہیں، دشمن زمانہ ہے

I must kill the misery

Before I leave

I am a friend to all

Yet the times are hateful

 

یہ دن و رات کا سفر، یہ ستاروں کا محور

پھر قیامت کا وعدہ ہے، عجیب تماشا ہے

The rotation of the planets

The paths laid out for stars

The absurd promise that one day

It will all end

 

مل کے بچھڑ گئے، بچھڑے تو مر گئے

چھوٹی سی اک بات کا، طویل فسانہ ہے

A meeting and then parting

The parting leading to death

A small matter

A long story

 

دل  ہی  تو ٹوٹا ہے،  کیا عرش بکھرا ہے؟

ہم مان چکے کب کے، بس تم کو منانا ہے

It is just a broken heart

Not the heavens torn asunder

I have come to acceptance

Are you there yet?

 

مندر میں ہوں برہمن تو مسجد میں مسلمان

میں اور کیا بنوں گا؟  کیا کس نے بنانا ہے

I am a Brahmin in the temple

A Moslem in the mosque

What else am I to be

What else will I be?

 

لبِ استاد  پے  رہتی،  مسکان  تو ہلکی سی

دل کھول کے دیکھو تو، تپتا ہوا صحرا ہے

And yes he smiles

You can see it on his lips

If you look in his heart

You’ll find a burning desert

 

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry

They left smiling…

ہمدمِ عزیز سے ملاقاتیں گئیں

گم ہوے وہ دن، وہ راتیں گئیں

I miss meeting

My dear friend

I miss those days

And nights

 

محرومیِ آوازِ دوست مدت سے ہے

وہ  شیریں  کلام،  وہ  باتیں  گئیں

And it has been a while

Since I heard her voice

That sweet language

Those conversations gone

 

وعدہ تو ہے انکا، یقین نہیں میرا

خوشیاں دل میں، آتے آتے گئیں

Although she has promised it

I have my doubts

I do not think

My heart will play host to joy

 

آمدِ خورشید! بیدار او خطاکار!

یہ پیام صبح کرنیں سناتے گئیں

The sun comes! Hark!

Wake up O sinful man

This message brought by

The morning ray

 

کیوں پوچھو عہدِ جوانی کے قصے؟

کے  ویسی  تمام   وارداتیں   گئیں

And why do you ask me

About my vagrancies of youth?

All those incidents

Lost from memory

 

تیری یاد ہر سوچ بدل دیتی ہے

جو روتے آئیں، وہ گاتے گئیں

And it is your remembrance

Which alters my thoughts

Those which would bring tears

Now bring music

 

فتویِٰ کفر ہے شیخ کا مجھ پے

کے تسبیح گئی، منجاتیں گئیں

I am called a disbeliever

By the preacher

Since I lost my rosary

My lamentations

 

جو یاد کرایا  اُن کو  پرانا وعدہ

ہنس کے بولے وہ ساعتیں گئیں

And when I reminded her

Of her promises

She smiled and said

The moment has passed

 

جو ملنے آئیں استاد سے اس دن

حسینانِ شہر، مسکراتے  گئیں

That day when they came to see him

The beauties of the city

Heard him speak

And they left smiling

 

Leave a comment

Filed under Uncategorized