Tag Archives: qazi

A Conscientious Man

وہ فرض شناس بھی، کرتا غفلت بھی

بیوفائی اس کا شوق بھی عادت بھی

Though he is a conscientious man

He shirks his duties

This behaviour is in his attitude

And his nature

 

وصل کے ساتھ ہی آرزوِ فراق آئ

پیار بھی ان سے ہے عداوت بھی

With the union of lovers

There was a thought of parting

Though there was love

There was also animosity

 

کچھ  تو احکامِ  مشائخ  بھاری  ہیں

ہم اطاعت بھی کرتے ہیں بغاوت بھی

The rules set down by the priests

Are hard to follow

I accept some

Others I revolt against

 

لوگ  مناتے ہیں  جشنِ آزادیِ ملک

بگاڑیں اسے اور کریں سجاوٹ بھی

The people celebrate

A day of freedom for their land

A land that they plunder

And now decorate with flags

 

جانا  تو  ہو  گا  ہمیں  مقتل  میں آج

حکمِ قاضی بھی ہے ان کی دعوت بھی

I shall certainly go

To the gallows today

The judge has ordered so

And she has invited me to come

 

جائیں کہاں ہم شہرِ جنوں چھوڑ کے؟

شہر میں سکوں بھی ہے وحشت بھی

Where would I go?

Leaving this city of madness

It gives me peace

And a fevered mind

 

شاعری چھٹتی نہیں استاد سے یاروں

وجہِ بدنامی ہے اور وجہِ شہرت بھی

I doubt he would stop

This madness

It is a cause for his ignominy

And his fame

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

The search for death… تلاشِ مرگ

تلاشِ مرگ ابعث، شہرِ جاناں سے چلنا سہی ہے

یاں  توں  ہی بتا اے دل،   در در  پھرنا سہی ہے؟

The search for death

Is useless

Or tell me my heart

Is it ok to go from door to door searching for it?

j

کتنی بہاریں اور دیکھنی ہیں اداس آنکھوں سے؟

دورِ خزاں  ہے عمر کا،  جہاں  سے چلنا سہی ہے

How many more springs

Will you see with your sad eyes?

Fall has arrived

Its time to leave the world

j

اس کے ہمنشین ہونے سے، آج  نشہ سا ہو گیا

نشے میں غلطی ہوئی، نشے میں گرنا سہی ہے

I felt intoxicated

While sitting with her

We made mistakes while intoxicated

I fell when I was inebriated

j

پاواشِ جرمِ عشق  میں   پھر  عدالت  گئے تو

حکمِ قاضی یہی تھا کے، تیرا مرنا سہی ہے

I was accused of falling in love

By the courts and the qazi

The punishment as always

Was death

j

ہاتھوں میں وہ خنجر لئے گھومتی پھرتی ہے

ابھی کچھ دیر ٹک بیٹھ، چھپے رہنا سہی ہے

She stalks you

With daggers drawn

Sit down here

Hide for a while

j

نفسِ امارہ و مطمین یکجان بھی ہوتے ہیں

کچھ  غلط  بات تو نہیں، انکا ملنا سہی ہے

The heart that seeks

And the one which is happy

Can be possibly found

In the same body

j

کیا  کیا  نہ کہا  انہوں  نے  آج  ہمارے  آگے

ہم نے بس اتنا ہی کہا، آپ کا کہنا سہی ہے

What was I not accused of

By her today

And all I could say was

You are right

j

فطری  سے تو احکام  ہیں تیرے  مذہب  کے

دل جانتا ہے تیرا, کیا غلط اور کیا سہی ہے

The orders of your faith

Are quite natural

And your heart knows

Right from wrong

j

تعرف  ہمارا اس طرح  سے دوست  کرتے  ہیں

استاد ذرا دیوانہ سا ہے، آدمی ورنہ سہی ہے

My friends introduce me

By saying

He is a little mad

But otherwise he is a good man

2 Comments

Filed under Ghazal, Poetry