Tag Archives: Prayers

It shall suffice…

جانے دے میری جاں، اتنے ستم کافی نہیں؟

خونِ  جگر  لے  گی؟  چشمِ  نم  کافی  نہیں؟

A pause darling

I am quite hurt already

Will you draw out my blood?

Are tears not sufficient?

 

جاں  دی  وفا  دی،  وقت کی  متاں بھی دی

تجھے جہاں بھی چاہیے؟ کیا ہم کافی نہیں؟

I gave life, love

All the time I had

Would you want the world as well?

Do I not suffice for you?

 

اب تو واں ہیں جہاں خیالِ جاں ہی نہیں

آپ سے دور ہوے، یہ  ظلم  کافی  نہیں؟

And now I am at a place

Where I do not care

I was called away from you

Was that not torture enough?

 

غمِ  دوراں،  غمِ  جاناں،  غمِ  ہجراں

اور کیا چاہیے؟ اتنے غم کافی نہیں؟

The sorrows of the times

This life, The parting

What else could I desire?

I have sorrows aplenty

 

مشائخ  ڈھونڈتے  جنت  سایہِ تلوار تلے

سایہِ تلوار ہی کیوں؟ کیا قلم کافی نہیں؟

Your preachers seek paradise

In the shadows of their blades

Why blades?

Are pens not sufficient?

 

دعاِ کرم کی تو ہوئی نجاتِ  بلاِ  عشق

یکایک  آئ  صدا، یہ کرم کافی نہیں؟

It took your prayers

To free my heart

And I heard a voice say

Is that not sufficient for you?

 

Advertisements

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

Advancing Onwards

تیرے بغیر میرے  غم،  کچھ اور بڑھ گئے

سلے نہ تھے کے زخم، کچھ اور بڑھ گئے

In your absence

The sorrows increased slightly

Those wounds unhealed

Ripped further slightly

 

ہمرکابیِ  رقیب  سے  نکھرتی  ہے  وہ

اس کی زلف کے خم، کچھ اور بڑھ گئے

And when she is with him

She seems sweeter

Her beauty

becomes magnified

 

حالتِ جنوں کے ساتھ تھا شوقِ شہادت

حکمِ پسپائی پے ہم، کچھ اور بڑھ گئے

With madness

I coupled a deathwish

On the order to retreat

I advanced further

 

ہاں  قسم  تو  کھائی  تھی  ہم نے  کم  پینے کی

صحبتِ یاران پے جام و جم، کچھ اور بڑھ گئے

And yes I swore

To try and drink less

But in the company of friends

I am bound to have a few more drinks

 

صبح  ہجوم  میں  گزری  تو  رات تنہا کاٹی

روز و شب کے یہ ستم، کچھ اور بڑھ گئے

The morning I spend with people

Engaged in business

At night, I walk alone

Compounding my sorrows

 

ستمِ بیوفائی  پے  تیری  یہ حسین مسکان

لاچار پے تیرے ظلم، کچھ اور بڑھ گئے

She tortures me

With a smile

I am helpless

And I think I like it

 

کچھ اثر نہ کیا  واعظ کی دعا نے مجھ پہ

کے مزاج کے زیر و بم، کچھ اور بڑھ گئے

The prayers of that pious man

Had little impact

Except for

Increasing the intensity of my moods

 

ہاں کچھ عجیب سی عادات ہے استاد کی یاروں

جہاں جانا ممنوع  وہاں  قدم، کچھ اور بڑھ گئے

And it is a strange habit

That he has

Where it is forbidden to tread

He rushes headlong

Leave a comment

Filed under Uncategorized

A creature of habit… عادت سے مجبور

مُلا کی رگِ جان کے لیے ناسور ہیں ہم

بغاوتِ واعظ میں تو مثلِ منصور ہیں ہم

I am a plague

For the strict mullah

Rebelling against the sermon

I am the like of Mansoor

j

بانسبت آپ کی  ہمیں  سب  دیوانہ  پکاریں

آپ کے پرستاروں میں کافی مشہور ہیں ہم

With regard to you

I am considered a fool

This makes me quite notorious

Amongst your admirers

 

کیوں نہ کافر ہو جائے کوئی تجھے دیکھ کر

تیری اک جھلک دیکھ کر شعلہِ طور ہیں ہم

One glance at you

Can cause a loss of faith

With one look you changed me

Into the flame that burns a mountain

 

خواجگانِ دور حاضر کی یہ ہے تعریف آخر

امن  و انسانیت  کے لئے  نرا  فتور  ہیں  ہم

The rulers of the times

May introduce themselves like so

For peace and humanity

We are a curse

 

میرے  ہی کیے  وعدے، مجھے کیوں  یاد آتے؟

کیا وعدے ہم نبھاتے؟ کوئی نیا دستور ہیں ہم؟

The promises I made

Keep coming back to my mind

How could I keep opposing words

Am I a new constitution?

 

شبِ ماہ میں ان کی، یہ تھی وجہِ وعدہ خلافی

پا بامہندی  ہیں  ہم، آنے  سے  معذور  ہیں  ہم

In a moonlit night her excuse

For not coming to see me

Was simple

I have henna on my feet

 

یہ کیا غضب کیا؟ استاد نے عشق چھوڑ دیا؟

اپنی ہم کیا کہیں؟ عادت سے مجبور ہیں ہم

What a sad terrible thing

He has stopped loving outright

As for me

I am a creature of habit

 

شام و سحر میری، سب تیری  عبادت  میں گذری

کمال اعزازوشرف میرا، کے تیرے مزدور ہیں ہم

My morn and evening

Is spent worshipping you

It is an honor

To be your slave

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry

یا باری

یا باری تعالیٰ  بدل ہی ڈال میرا نفس

یاں پھردے دے پیر کوئی عیسا نفس

آی آوازِ رضوان توں بس دل کی سن

کے اس دور کی پیری تو فتنہ ابعث

Leave a comment

Filed under Quatrains