Tag Archives: Patience

Then I cried a lot…

میں  درِ رحماں  گیا،  جا  کر بہت رویا

پھر واپس میکدے میں، آ کر بہت رویا

I went to the house of worship

I cried a lot there

Then I came back to the tavern

And cried a lot there

 

جب آے یاد مجھ کو، گناہ سارے کل کو

خدا کے آگے سر، جھکا  کر بہت رویا

And yesterday

I recounted all my sins

I bowed my head before God

And cried a lot for forgiveness

 

اقرارِ  عشق  پے  وہ  کچھ  بدل سی گئی

جو بات نہ سنانی تھی، سنا کر بہت رویا

On the confession of love

Things changed

The words I was not supposed to say

Made me cry a lot once I had said them

 

جو  ترے  سامنے  رونا  ممنوع ٹھہرا

تو میں چراغِ  شام، بھجا کر بہت رویا

And hopelessness

Is forbidden before you

So I turned out the lights

And cried in the darkness

 

قسم  یاد تھی ان کے آگے نہ رونے کی

ان  سے  اپنا چہرہ ، چھپا کر بہت رویا

I swore

I would not cry

Before her

So I hid my face before shedding tears

 

جو  تجھ  سے  دوری ہی  میرا مقدرٹھہرا

میں اپنے ہاتھ اپنا کفن، سجا کر بہت رویا

If I am destined to be

Away from you

I will decorate my burial shroud

And cry as I do it

 

جانتا  تھا  کے  اسی راستے سے آئیں گے

سرِ رہگذر ان سے نظر، ملا کر بہت رویا

I knew she would walk

Upon this path

I wept uncontrollably

When I met her gaze

 

امتحانِ عشق ہی تو تھی میری جاں طلبی

وہ  یوں  میرا عشق، آزما  کر بہت رویا

And he wanted

To take my life as a test of love

He cried a lot

After testing my love

 

کیسے اسے معاف نہ کرتا؟ دل صاف نہ کرتا؟

کے وہ کافر ادا میرا دل،  دکھا  کر  بہت رویا

And how could I not forgive him?

How could I hold a grudge?

He cried a lot

After hurting me

 

عاشقی صبر طلب سہی غالب پر میں تو

شکوہ کر، شکایت کر، گلہ کر بہت رویا

As per the words of Ghalib

Love demands patience

Yet I cry a lot

With laments, complaints, plaints

 

ایک دریا لیے پھرے، استاد اپنی آنکھوں میں

ان  کو  اپنا  زخمِ  دل،  دکھا  کر  بہت  رویا

You’ll find a river in his eyes

As he cries

While he shows

The wounds on his heart

Leave a comment

Filed under Uncategorized

What the wilderness lacks… ویرانے میں کم ہے

امیدِ بصارتِ  یارِ دیرینہ تو اس ویرانے میں کم ہے

صبر با رضاِ خدا لازم پر صبر دیوانے میں کم ہے

There is little hope

Of meeting an old friend in this wilderness

Patience is an enjoined virtue

Yet the madman lacks patience

 

شیرینیِ  گفتارِ  لبِ  یار  کی  کیا  بات  کریں  ہم؟

بات سننے میں جو مزہ ہے وہ بتانے میں کم ہے

And what do I say

About her sweet lips and her sweet words

The joy of listening to her

Is more than I could say

 

جو چنگاری کبھی روح کو اک شعلہ کرتی تھی

کیوں  آج  وہ دلِ مردہ  کو  گرمانے میں کم ہے

The spark

Which turned my soul to fire once

Fails today

To warm my heart

 

جانے کیوں وہ قصہِ یوسف سے اتنا شرماتے ہیں

لگتا تو ہے طویل و پیچیدہ پر سنانے میں کم ہے

Why does she shy away

From the story of Joseph

It sounds a complicated tale

But is quite short

 

زیادہ فرق تو نہیں خواہشِ عاشق و معشوق کے مابین

مزہ جو بات مان جانے میں ہے، منوانے میں کم ہے

There is no real difference

between the desire of the lover and the beloved

But the joy in accepting a demand

Is more than getting your demands accepted

 

کیا سبب کے اب جنوں کی پہلی سی طلب نہ رہی

کیا تیرا حسن آج آتشِ  شوق سلگانے میں کم ہے؟

What is the matter with you

That you can no longer induce madness?

Is your beauty

Failing to set hearts aflame?

 

با قدرِ ظرف  ہر نفس استاد  سے  رکھتا  ہے  ہمدردی

اُس کے رازداروں میں ہے زیادہ پر انجانے میں کم ہے

As much as they can

People sympathise with me

Those who know my secrets more than

Those who do not know me

 

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry