Tag Archives: Old age

The search for death… تلاشِ مرگ

تلاشِ مرگ ابعث، شہرِ جاناں سے چلنا سہی ہے

یاں  توں  ہی بتا اے دل،   در در  پھرنا سہی ہے؟

The search for death

Is useless

Or tell me my heart

Is it ok to go from door to door searching for it?

j

کتنی بہاریں اور دیکھنی ہیں اداس آنکھوں سے؟

دورِ خزاں  ہے عمر کا،  جہاں  سے چلنا سہی ہے

How many more springs

Will you see with your sad eyes?

Fall has arrived

Its time to leave the world

j

اس کے ہمنشین ہونے سے، آج  نشہ سا ہو گیا

نشے میں غلطی ہوئی، نشے میں گرنا سہی ہے

I felt intoxicated

While sitting with her

We made mistakes while intoxicated

I fell when I was inebriated

j

پاواشِ جرمِ عشق  میں   پھر  عدالت  گئے تو

حکمِ قاضی یہی تھا کے، تیرا مرنا سہی ہے

I was accused of falling in love

By the courts and the qazi

The punishment as always

Was death

j

ہاتھوں میں وہ خنجر لئے گھومتی پھرتی ہے

ابھی کچھ دیر ٹک بیٹھ، چھپے رہنا سہی ہے

She stalks you

With daggers drawn

Sit down here

Hide for a while

j

نفسِ امارہ و مطمین یکجان بھی ہوتے ہیں

کچھ  غلط  بات تو نہیں، انکا ملنا سہی ہے

The heart that seeks

And the one which is happy

Can be possibly found

In the same body

j

کیا  کیا  نہ کہا  انہوں  نے  آج  ہمارے  آگے

ہم نے بس اتنا ہی کہا، آپ کا کہنا سہی ہے

What was I not accused of

By her today

And all I could say was

You are right

j

فطری  سے تو احکام  ہیں تیرے  مذہب  کے

دل جانتا ہے تیرا, کیا غلط اور کیا سہی ہے

The orders of your faith

Are quite natural

And your heart knows

Right from wrong

j

تعرف  ہمارا اس طرح  سے دوست  کرتے  ہیں

استاد ذرا دیوانہ سا ہے، آدمی ورنہ سہی ہے

My friends introduce me

By saying

He is a little mad

But otherwise he is a good man

2 Comments

Filed under Ghazal, Poetry

The beauty of the beloved… حسنِ یار

حسنِ یار  حسنِ ماہ  کا  مکمل  جواب  ہے

اس  کے  سامنے  قدرت بھی  لا جواب ہے

The beauty of the beloved

Is the perfect retort

To the beauty of the full moon

Nature does not have an answer to her magnificence

 

اس جدائی سے بہتر تو تیری جہنم ہی ہو گی

کے  اس  سے  دوری  میری،  یا رب  عذاب  ہے

I might be better off in hell

Than be separated

From her

My lord, this separation is a torture

 

کمال تیری قدرت اور مؤثر تیری رحمت

کے ترے اک  اشارے  پر، آتش گلاب ہے

The power you have

And the mercy you show

Effective and majestic

You turn fire to flowers

 

بڑی امیدوں سے شیخ جی رنگِ سیاہ لاے

سمجھے  علاجِ   پیری، انکا  خضاب  ہے

The old man buys black dye

With a lot of hope

He seems to think this dye

Will cure old age

 

کچھ اتنا  فرق تو نہیں ما و مایا میں

رنگِ  خدا بھی  اکثر،  رنگِ  آب  ہے

There isn’t much difference

between matter and water

The color of God

Oft looks like the color of water

 

کیا خورشید نے میری آنکھ خیرہ کی؟

یاں  حسنِ جلواگر کی،  تب و تاب ہے؟

Have I been dazed

By brilliant sunlight?

Or is the sight

Of the beloved that dazes me

 

عجب عشق و الفت کے کھیل ہیں جہاں میں

کے  جو  ہار گیا  میدان، وہی   کامیاب   ہے

The world

Has strange rules for love and longing

That those who lost the battle

Have won the war

 

یہی اشتہارِ عشق لگا درِ یار پے بیٹھا

جنسِ  دل  یہاں ارزاں، دستیاب  ہے

I hold a sign

At the door of the beloved

I am selling

My heart for cheap

 

کون انکاری  ہو گا استاد کی  اس  بات سے؟

مردوں میں کوئی مرد ہے، توبس بو تراب ہے

And who would disagree

On this point of mine

If there was ever a man amongst men

It was Hazrat Ali

6 Comments

Filed under Ghazal, Poetry