Tag Archives: nights

Remembrance

جو کوئی بات دکھاتی ہے، وہی یاد آتی ہے

سرد  رات  ستاتی  ہے،  وہی یاد آتی ہے

When something hurts me

I am reminded of her

Winter nights

Remind me of her

 

بارہا چاند  میں  بھی  نظر  آتی  ہے

چاندنی لبھاتی ہے، وہی یاد آتی ہے

Oftimes, I see her in the moon

I like the moonlight

Though it does

Remind me of her

 

غور  سے  دیکھی  نہرِ جان  کی روانی

موجِ غم آتی جاتی ہے، وہی یاد آتی ہے

I see the river of time

Waves of joy and sorrow

One after the other

Remind me of her

 

رو رو نکال دوں زندگی سے یاد اسکی

زندگی  رلاتی  ہے،  وہی  یاد  آتی ہے

I would have wept away

Her memory

Sadly the tears

Bring back more memories

 

ایسے ہی کسی موسم میں ہم ملے تھے

یہ  رت  جلاتی  ہے،  وہی یاد آتی ہے

I remember it was similar weather

When we met

I hate this weather now

It reminds me of her

 

کاوش کی بھولنے کی غمِ دنیا لے کے

ایسے یاد جاتی ہے؟  وہی یاد آتی ہے

So I tried to forget her

Looking at the world’s sorrows

It was a fool’s errand

It does not remove memories

 

یہ غزل  ختم  تو  محفل  ختم  استاد

شمع ٹمٹماتی ہے،  وہی یاد آتی ہے

The words end

And so do the night’s revelries

The candle flickers

It reminds me of her

 

Advertisements

7 Comments

Filed under Ghazal, Poetry

They left smiling…

ہمدمِ عزیز سے ملاقاتیں گئیں

گم ہوے وہ دن، وہ راتیں گئیں

I miss meeting

My dear friend

I miss those days

And nights

 

محرومیِ آوازِ دوست مدت سے ہے

وہ  شیریں  کلام،  وہ  باتیں  گئیں

And it has been a while

Since I heard her voice

That sweet language

Those conversations gone

 

وعدہ تو ہے انکا، یقین نہیں میرا

خوشیاں دل میں، آتے آتے گئیں

Although she has promised it

I have my doubts

I do not think

My heart will play host to joy

 

آمدِ خورشید! بیدار او خطاکار!

یہ پیام صبح کرنیں سناتے گئیں

The sun comes! Hark!

Wake up O sinful man

This message brought by

The morning ray

 

کیوں پوچھو عہدِ جوانی کے قصے؟

کے  ویسی  تمام   وارداتیں   گئیں

And why do you ask me

About my vagrancies of youth?

All those incidents

Lost from memory

 

تیری یاد ہر سوچ بدل دیتی ہے

جو روتے آئیں، وہ گاتے گئیں

And it is your remembrance

Which alters my thoughts

Those which would bring tears

Now bring music

 

فتویِٰ کفر ہے شیخ کا مجھ پے

کے تسبیح گئی، منجاتیں گئیں

I am called a disbeliever

By the preacher

Since I lost my rosary

My lamentations

 

جو یاد کرایا  اُن کو  پرانا وعدہ

ہنس کے بولے وہ ساعتیں گئیں

And when I reminded her

Of her promises

She smiled and said

The moment has passed

 

جو ملنے آئیں استاد سے اس دن

حسینانِ شہر، مسکراتے  گئیں

That day when they came to see him

The beauties of the city

Heard him speak

And they left smiling

 

Leave a comment

Filed under Uncategorized