Tag Archives: meeting

Scorched Earth

کچھ  کر  کے  جانا ہے،  دکھ کو مٹانا ہے

ہم دوست تو سب کے ہیں، دشمن زمانہ ہے

I must kill the misery

Before I leave

I am a friend to all

Yet the times are hateful

 

یہ دن و رات کا سفر، یہ ستاروں کا محور

پھر قیامت کا وعدہ ہے، عجیب تماشا ہے

The rotation of the planets

The paths laid out for stars

The absurd promise that one day

It will all end

 

مل کے بچھڑ گئے، بچھڑے تو مر گئے

چھوٹی سی اک بات کا، طویل فسانہ ہے

A meeting and then parting

The parting leading to death

A small matter

A long story

 

دل  ہی  تو ٹوٹا ہے،  کیا عرش بکھرا ہے؟

ہم مان چکے کب کے، بس تم کو منانا ہے

It is just a broken heart

Not the heavens torn asunder

I have come to acceptance

Are you there yet?

 

مندر میں ہوں برہمن تو مسجد میں مسلمان

میں اور کیا بنوں گا؟  کیا کس نے بنانا ہے

I am a Brahmin in the temple

A Moslem in the mosque

What else am I to be

What else will I be?

 

لبِ استاد  پے  رہتی،  مسکان  تو ہلکی سی

دل کھول کے دیکھو تو، تپتا ہوا صحرا ہے

And yes he smiles

You can see it on his lips

If you look in his heart

You’ll find a burning desert

 

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry

Seeking and Searching

اب جانے دے اسے، رسوائی میں کیا ہے؟

نہیں سنتا نہ سنے ، سنوائی میں کیا ہے؟

Now let it go

No use flinging mud

If he does not listen

What is the use of crying

 

دے دے مجھے، جام بے حساب دے دے

تعدادِ  جام  کی،  گنوائی  میں  کیا  ہے؟

Keep giving me cup upon cup

Do not keep a count

The numbering

Is immaterial

 

پہلے تو  گنواے،  میرے پرانے وعدے

ہنس کے پھر بولے، وفائی میں کیا ہے؟

At first I was reminded

Of certain promises

Then she laughed and said

What is the use of keeping promises?

 

آواز تو آتی ہے اسداللہ کی کہیں سے

جا  دیکھ  تو ذرا،  اترائی میں کیا ہے

I can hear

The roaring of God’s lion

Go seek out

What is happening at the watering hole

 

نہ پڑ اس  سوچ میں،  خیال کے بھنور میں

سادہ سی اک بات ہے، گہرائی میں کیا ہے؟

Do not trouble yourself

With these thoughts

It is quite simple, really

Nothing too deep

 

دل توڑنا تو ان کا  شیوہ سا بن چکا ہے

مانا  بری  بات  پر،  برائی  میں کیا ہے؟

And yes it is an old habit of hers

To break hearts

It is quite sad really

But does it really matter?

 

جب مانتا ہے کے رب تیرے قریب ہے تو

خدا ڈھونڈ خود میں، خدائی میں کیا ہے؟

When you believe

That God is near you

Seek her within yourself

Why seek her in the world?

 

کس لئے ہجر کی بات کرتا ہے استاد ؟

ملنا تو چلو ملن ہے، جدائی میں کیا ہے؟

And why is parting

So sweet to you

Meeting is afterall a blessing

What is there in parting?

 

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

They left smiling…

ہمدمِ عزیز سے ملاقاتیں گئیں

گم ہوے وہ دن، وہ راتیں گئیں

I miss meeting

My dear friend

I miss those days

And nights

 

محرومیِ آوازِ دوست مدت سے ہے

وہ  شیریں  کلام،  وہ  باتیں  گئیں

And it has been a while

Since I heard her voice

That sweet language

Those conversations gone

 

وعدہ تو ہے انکا، یقین نہیں میرا

خوشیاں دل میں، آتے آتے گئیں

Although she has promised it

I have my doubts

I do not think

My heart will play host to joy

 

آمدِ خورشید! بیدار او خطاکار!

یہ پیام صبح کرنیں سناتے گئیں

The sun comes! Hark!

Wake up O sinful man

This message brought by

The morning ray

 

کیوں پوچھو عہدِ جوانی کے قصے؟

کے  ویسی  تمام   وارداتیں   گئیں

And why do you ask me

About my vagrancies of youth?

All those incidents

Lost from memory

 

تیری یاد ہر سوچ بدل دیتی ہے

جو روتے آئیں، وہ گاتے گئیں

And it is your remembrance

Which alters my thoughts

Those which would bring tears

Now bring music

 

فتویِٰ کفر ہے شیخ کا مجھ پے

کے تسبیح گئی، منجاتیں گئیں

I am called a disbeliever

By the preacher

Since I lost my rosary

My lamentations

 

جو یاد کرایا  اُن کو  پرانا وعدہ

ہنس کے بولے وہ ساعتیں گئیں

And when I reminded her

Of her promises

She smiled and said

The moment has passed

 

جو ملنے آئیں استاد سے اس دن

حسینانِ شہر، مسکراتے  گئیں

That day when they came to see him

The beauties of the city

Heard him speak

And they left smiling

 

Leave a comment

Filed under Uncategorized

So why did you do it?

 

اک  خوابیدہ  درد  کو  جگایا  کیوں تھا؟

کوئی پوچھے ہم نے دل لگایا کیوں تھا؟

An old ache

Yet they wake it up again

Someone should find out

Why people fall in love

 

پوچھوں گا روزِ حشر یہ خدا سے

مٹانا ہی تھا تو جہاں بنایا کیوں تھا؟

And on the day of judgement

I shall inquire of the holy

If the end result was destruction

Why did you make the world?

 

ترے  بلواے  آے  کعبہ، دیدار تو کرا

جو نظارہ نہیں ہے تو بلایا کیوں تھا؟

And I am told

I was invited to the holy places

So now I am here

Where is The Light?

 

ظالم  سے  سوال  ہو  گا  روزِ  قیامت

مرے بندوں کو تو نے ستایا کیوں تھا؟

And one day

The cruel will face

The final question

Why did they show cruelty to others?

 

خیالِ توبہ کے ساتھ ہی خیال آتا ہے

ساقی نے وہ پہلا جام پلایا کیوں تھا؟

With the thought of penance

I wonder

Why did the cup bearer

Give me that first drop?

 

آپ ہی کا نام لکھا تھا ہم نے اس پے

بتایے مرے نامہ کو جلایا کیوں تھا؟

It was your name

Written in my letters

So tell me

Why did you burn them?

 

اب  کس کے ہاتھ میں شفا رہی باقی

عیسیٰ کو جہاں سے اٹھایا کیوں تھا؟

Who remains in the world

With the skills of a healer?

Why was the healer

Taken away?

 

کیوں شک تھا آپ کو میری وفا پے

اب آپ روتے ہیں؟ آزمایا کیوں تھا؟

Did you doubt

My faithfulness?

And now you weep?

Why did you test me?

 

سوال  از  تقدیر  با حالِ  فراقت

جدا کرنا تھا تو ملایا کیوں تھا؟

A question for fate

In a period of parting

If we were to be parted

Why did we meet at all?

 

بڑے دکھ سے بولی وقتِ رخصت

یونہی  جانا  تھا  تو آیا  کیوں تھا؟

And she said to me

With tremendous sorrow

If you planned to walk away like this

Why did you come here at all?

 

دلِ استاد ٹوٹنا کوئی نئی بات تو نہیں

ذرا سونے ہی دیتے! جگایا کیوں تھا؟

And there is nothing newsworthy

In the fact that he has lost

You should have let me sleep

Why did you wake me up?

 

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry