Tag Archives: masjid

Scorched Earth

کچھ  کر  کے  جانا ہے،  دکھ کو مٹانا ہے

ہم دوست تو سب کے ہیں، دشمن زمانہ ہے

I must kill the misery

Before I leave

I am a friend to all

Yet the times are hateful

 

یہ دن و رات کا سفر، یہ ستاروں کا محور

پھر قیامت کا وعدہ ہے، عجیب تماشا ہے

The rotation of the planets

The paths laid out for stars

The absurd promise that one day

It will all end

 

مل کے بچھڑ گئے، بچھڑے تو مر گئے

چھوٹی سی اک بات کا، طویل فسانہ ہے

A meeting and then parting

The parting leading to death

A small matter

A long story

 

دل  ہی  تو ٹوٹا ہے،  کیا عرش بکھرا ہے؟

ہم مان چکے کب کے، بس تم کو منانا ہے

It is just a broken heart

Not the heavens torn asunder

I have come to acceptance

Are you there yet?

 

مندر میں ہوں برہمن تو مسجد میں مسلمان

میں اور کیا بنوں گا؟  کیا کس نے بنانا ہے

I am a Brahmin in the temple

A Moslem in the mosque

What else am I to be

What else will I be?

 

لبِ استاد  پے  رہتی،  مسکان  تو ہلکی سی

دل کھول کے دیکھو تو، تپتا ہوا صحرا ہے

And yes he smiles

You can see it on his lips

If you look in his heart

You’ll find a burning desert

 

Advertisements

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry

The Place

کسی  جگہ  خدا کا  مقام  تو ہو گا

دار و طور نہیں تو لبِ بام تو ہو گا

I hope to find her

Somewhere

Perhaps on the cross or Mount Sinai

Maybe even the edge of a window in the sky

 

یہ  تنبیہ تھی  مرے چاہنے والوں کی

شروع کر تو شاعری ، بدنام تو ہو گا

And such was the warning

From those who love me

Start writing

You will be infamous

 

مسجد سے باہر کیا ہمیں تو کیا ہوا؟

اب سایہِ مسجد میں  آرام تو ہو گا

Does it really matter

If I am asked to leave the temple

At least now I can find peace

In the shade offered by that building

 

لے چلو مجھے آسماں کے کنارے

رازی تو شاید نہ ہو، خیام تو ہو گا

Now take me

To the edge of the sky

I may not find Raazi

But Khayam will certainly be there

 

لاکھ پردے میں ملے تو بھی ٹھیک ہے

نظارہِ یار  نہ سہی،  کلام  تو  ہو  گا

A thousand veils

Do not matter

I may not see her

But I can talk to her

 

آؤ اب  کاغذ  کو  ہی  قاصد بنا لیں

کلام بھی جانے دو، سلام تو ہو گا

So lets make these words

My message

I may not hear back

By my voice carries to her

 

پشیمانی ان کو ہے میرے قصّے سے

فسانہِ  بدنامی  ہے، عام  تو  ہو  گا

Someone is ashamed

Of my story

It is a tale of infamy

It does become public

 

تو پھر چلیں استاد محفلِ اغیار میں؟

سکونِ جاں نہ سہی، جام تو ہو گا

So shall we proceed

To the gathering of strangers

I may not find peace there

But I might find some wine

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry