Tag Archives: mansoor

It all happened one night…

میں کافر سے مسلماں ہوا رات میں

کے اک انجان مہرباں ہوا رات میں

In one night

My disbelief turned to belief

It was all due to

The kindness of a stranger

 

عظمت اس کی ہے، شوکت اس کی ہے

جو   خدا  کا  مہماں  ہوا   رات  میں

Glory for the one

Grandeur belongs to the one

Who became a guest of God

In one night

 

کیا بتائیں کے ہم کیا لکھتے ہیں؟

خوں مایہِ  قلمدان ہوا رات میں

And what could I tell you

About what I write?

I found life’s nectar

In the inkpot last night

 

صبح سے شہر میں خوف طاری

کیا کوئی نیا فرمان ہوا رات میں؟

And this morning there is fear

Across the city

Was there a new order

Passed on from high up last night?

 

چند  ہی  پہر کا  ساتھ  تھا  ہمارا

دن کا سنگھی انجان ہوا رات میں

We were together

But for a few brief hours

A friend during the day

Becomes a stranger at night

 

آے غریب خانہ پر روٹھ چل دے

الہی  بڑا نقصان  ہوا  رات  میں

She came to my house

But left in anger

I lost much

That accursed night

 

پورا دن لگا میرا عبادتِ خدا میں

پھر صنم پے قربان ہوا رات میں

And I spent the whole day

In worship and ritual

But at night I went back

To the same false gods

 

شبِ وصل  جو ریگستانِ جاں پہ آئ

وہ صحرا بھی گلستان ہوا رات میں

When I met her that night

I found

That even a wasteland

Can bloom

 

حکم ہوا زنداں  میں  ڈالو منصور کو

تو وہ زنداں بھی شبستان ہوا رات میں

And it was ordered

That Mansoor should be imprisoned

That prison

Turned into a pleasure garden

 

پورا دن استاد بولے انگریزی زبان

کیا  خاک  اردوداں  ہوا  رات میں؟

And he spends the whole day

Using a foreign language

Who says he knows

To write well?

Advertisements

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

A creature of habit… عادت سے مجبور

مُلا کی رگِ جان کے لیے ناسور ہیں ہم

بغاوتِ واعظ میں تو مثلِ منصور ہیں ہم

I am a plague

For the strict mullah

Rebelling against the sermon

I am the like of Mansoor

j

بانسبت آپ کی  ہمیں  سب  دیوانہ  پکاریں

آپ کے پرستاروں میں کافی مشہور ہیں ہم

With regard to you

I am considered a fool

This makes me quite notorious

Amongst your admirers

 

کیوں نہ کافر ہو جائے کوئی تجھے دیکھ کر

تیری اک جھلک دیکھ کر شعلہِ طور ہیں ہم

One glance at you

Can cause a loss of faith

With one look you changed me

Into the flame that burns a mountain

 

خواجگانِ دور حاضر کی یہ ہے تعریف آخر

امن  و انسانیت  کے لئے  نرا  فتور  ہیں  ہم

The rulers of the times

May introduce themselves like so

For peace and humanity

We are a curse

 

میرے  ہی کیے  وعدے، مجھے کیوں  یاد آتے؟

کیا وعدے ہم نبھاتے؟ کوئی نیا دستور ہیں ہم؟

The promises I made

Keep coming back to my mind

How could I keep opposing words

Am I a new constitution?

 

شبِ ماہ میں ان کی، یہ تھی وجہِ وعدہ خلافی

پا بامہندی  ہیں  ہم، آنے  سے  معذور  ہیں  ہم

In a moonlit night her excuse

For not coming to see me

Was simple

I have henna on my feet

 

یہ کیا غضب کیا؟ استاد نے عشق چھوڑ دیا؟

اپنی ہم کیا کہیں؟ عادت سے مجبور ہیں ہم

What a sad terrible thing

He has stopped loving outright

As for me

I am a creature of habit

 

شام و سحر میری، سب تیری  عبادت  میں گذری

کمال اعزازوشرف میرا، کے تیرے مزدور ہیں ہم

My morn and evening

Is spent worshipping you

It is an honor

To be your slave

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry