Tag Archives: Henna

Strange Mannerisms

چمن مٹا کے کرتی اسی کی حسن آرائی

کون  سمجھے  قدرت  کی  خیال  آرائی

Why is a garden ruined

Only to bloom again?

Who can explain

The strange mannerisms of nature

 

کون  سکھاتا  ہے  کویل  کو  نغمہِ کو

کس نے کی لالہ و گل کی تزین آرائی

Who teaches the nightingale

To sing with melody

Who has worked kintsugi

On the rose and the tulip

 

وہ گئی تو ساتھ میں گیت بھی لے گئی

رہیں  آہ   و  غزل ،   گم  نظم  آرائی

And she took song

With her

All I am left with

Are tears and verses

 

کچھ تو صلہ ہو گا برہمن کو کشٹ کا

بڑی  محنت سے کرتا ہے صنم آرائی

There must be some reward

For the efforts

He takes a lot of pain

To decorate false idols

 

پھر دورِ  جنوں  چلا  سکوں  فاسد ہوا

شہر کے اک کونے میں پھر بہار ائی

Another round of madness

Another night without peace

It seems some corner of my city

Has suddenly found spring

 

کیا کیا رکھتے ہیں لوگ بتوں کے آگے

دیکھ  تو  کوئی  فضیلت کی دستار آئ

What are the offerings

Made in the temples of falsehood

Hark, here comes

A crown of knowledge

 

ہم گئے انکے پیچھے ہاتھ میں دل لیے

دیکھ ہم کو انکے قدموں میں رفتار آئ

And I went after her

With my life in my hand

She saw me

And walked away faster

 

پھر  حسبِ  عادت  وعدہ  وفا  نہ ہوا

ادھر عادت درگزر ادھر عذر آرائی

As per our habits

The promise could not be fulfilled

One one side, habitual forgiveness

On the other, continual excuses

 

ابھی تو ہاتھ میرے لہو سے رنگ گئے

پھر کیوں کریں گے ہاتھ کی حنا آرائی

She has just dipped her hands

In my blood

Why would she now bother

With henna

 

جو قتل کرنا ہی انکا پیشہ ہے استاد

شکر ہے تیری جاں برسرِ روزگارائی

And if murder is her livelihood

You should thank her

At least your life

Was of some use to her

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

A creature of habit… عادت سے مجبور

مُلا کی رگِ جان کے لیے ناسور ہیں ہم

بغاوتِ واعظ میں تو مثلِ منصور ہیں ہم

I am a plague

For the strict mullah

Rebelling against the sermon

I am the like of Mansoor

j

بانسبت آپ کی  ہمیں  سب  دیوانہ  پکاریں

آپ کے پرستاروں میں کافی مشہور ہیں ہم

With regard to you

I am considered a fool

This makes me quite notorious

Amongst your admirers

 

کیوں نہ کافر ہو جائے کوئی تجھے دیکھ کر

تیری اک جھلک دیکھ کر شعلہِ طور ہیں ہم

One glance at you

Can cause a loss of faith

With one look you changed me

Into the flame that burns a mountain

 

خواجگانِ دور حاضر کی یہ ہے تعریف آخر

امن  و انسانیت  کے لئے  نرا  فتور  ہیں  ہم

The rulers of the times

May introduce themselves like so

For peace and humanity

We are a curse

 

میرے  ہی کیے  وعدے، مجھے کیوں  یاد آتے؟

کیا وعدے ہم نبھاتے؟ کوئی نیا دستور ہیں ہم؟

The promises I made

Keep coming back to my mind

How could I keep opposing words

Am I a new constitution?

 

شبِ ماہ میں ان کی، یہ تھی وجہِ وعدہ خلافی

پا بامہندی  ہیں  ہم، آنے  سے  معذور  ہیں  ہم

In a moonlit night her excuse

For not coming to see me

Was simple

I have henna on my feet

 

یہ کیا غضب کیا؟ استاد نے عشق چھوڑ دیا؟

اپنی ہم کیا کہیں؟ عادت سے مجبور ہیں ہم

What a sad terrible thing

He has stopped loving outright

As for me

I am a creature of habit

 

شام و سحر میری، سب تیری  عبادت  میں گذری

کمال اعزازوشرف میرا، کے تیرے مزدور ہیں ہم

My morn and evening

Is spent worshipping you

It is an honor

To be your slave

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry