Tag Archives: gods

The both of us

آج بازار برہم کریں؟ ہم بھی تم بھی

نیلامیِ  قلم  کریں؟ ہم  بھی  تم بھی

Should we rouse

A passion somewhere?

Should we both

Put up our pens for bidding?

 

خود پے ظلم کریں ہم بھی تم بھی

جاں پہ ستم  کریں ہم بھی تم بھی

Both of us

Torture ourselves

Hurt ourselves

The both of us

 

تم جاؤ خداخانہ، ہم باسیِ میخانہ

جستجوِ علم کریں ہم بھی تم بھی

You go to the temple

I towards the tavern

We both seek

Knowledge

 

تلاش ہے کسی کی، نظرِ بےطرح کی

خواہشِ  الم  کریں   ہم  بھی  تم  بھی

We seek a vision

Like no other

A sorrow

Sought by us both

 

دعا کرتے ہیں علاجِ عشق کے لیے

دم  پے دم  کریں  ہم  بھی  تم  بھی

And we pray

For a cure

For love

A prayer repeated often

 

پتھروں میں رب نہیں تو پھر کیوں

خدا  صنم  کریں  ہم  بھی  تم بھی

And if there is no spirit

In stones

Why do we become so connected

To those rocks?

 

جو بھر گئے ہیں تیرے دل کے گھاؤ

نیا  زخم  کریں؟  ہم  بھی  تم  بھی

If your earlier wounds

Have healed

Should you and I

Make new ones?

 

یہ کیا ستم کیا؟ کیوں درد عیاں کیا

تلاشِ غم کریں؟ ہم  بھی  تم  بھی

Oh come now!

Why did you tell me

About your sorrow

Now find a new misery

 

استاد  اور کیا؟   کہنا  باقی  رہا

گفتگو ختم کریں؟ ہم بھی تم بھی

So What is left?

Yet unsaid?

Should we stop talking

The both of us?

 

Advertisements

Leave a comment

Filed under Ghazal

I can not really say…

کیوں  آے  اس  جہاں  سے؟ کچھ کہ نہیں سکتے

کب جائیں گے ہم جاں سے؟ کچھ کہ نہیں سکتے

Why did I come into this world?

I can not really say

And when will I depart

I do not know

j

تھے ہم بھی بہشت میں، خدا کی پرورش میں

نکلے  کیوں  وہاں سے؟ کچھ کہ نہیں سکتے

And I was once in heaven

In the company of gods

Then why did I leave that realm?

I can not really say

j

ہے  یاد  آپ  کو  اپنی؟  عادتِ  خوش  گوئی

کیوں آپ آج مجھ سے، کچھ کہ نہیں سکتے؟

And do you remember

You sweet manner of speech

Can you please say

Something like you used to?

j

توں  لاجواب  کرتا ہے، نیت  خراب  کرتا ہے

بات ہوتی نہیں تجھ سے، کچھ کہ نہیں سکتے

You make me lose my words

And lose my thoughts

I can not focus

I can not talk

j

جو  بولنا ہے بولو، خاموش  یوں نہ بیٹھو

حیف نظری دلاسے؟ کچھ کہ نہیں سکتے؟

Speak whatever you have to say

Do not sit silently

What use are these longful looks?

Why don’t you use your words?

j

بہت  کچھ  کہنا  تھا،  راز  کوئی  کھولنا  تھا

پھر آج کیوں ہم اس سے، کچھ کہ نہیں سکتے؟

And I had a lot to say

To admit my faults

Yet I could not speak

I do not know why

j

ضروت تو انسانوں کی، آنکھوں میں بولتی ہے

خاموش بکھرے قآصے، کچھ  کہ  نہیں  سکتے

A beggar’s desires

Are obvious in his eyes

A silent begging bowl

Does not speak

j

کبھی تم بھی بولتے تھے، ووہی جو سوچتے تھے

استاد  پھر  اس طرح سے، کچھ کہ نہیں سکتے؟

And there was one a time

When you said what you thought

Why do you not

Continue to live the same way?

2 Comments

Filed under Ghazal, Poetry

What the people are saying about you…

کچھ خبر ہے تجھے؟ بولتے ہیں لوگ کیا کیا؟

مابینِ عرش و فرش، کرتے  ہیں لوگ  کیا کیا

Do you even know

What people say about you?

Between heaven and earth

What goes on amongst individuals?

j

اب   فرق  نہ  رہا  شور  و  ساز  میں

کیا سنائیں ہم، سنتے ہیں لوگ کیا کیا

Presently, There is little difference

Between noise and some forms of music

What can I say

What people listen to these days

j

کیا  عظیم  لوگ تھے  جو عدم سدھار چلے

روزانہ  جہاں میں، مرتے  ہیں لوگ کیا کیا

And what ancient masters

Have left for the next realm

And more do the same

On a daily basis

j

بڑی کوشش ہے انکی، عیوب چھپانے کی

بارے شیخِ حرم،  جانتے ہیں لوگ کیا کیا

He tries so hard

To hide his ills

About the pious pretender

People know a lot

j

قبروں پہ سجدہ کریں، کریں بندے کو خدا

سادہ دل و لاچار،  مانتے ہیں لوگ کیا کیا

Prostrations before graves

Making men into gods

The innocent fools

Believe in strange things

j

کیا  عقیدت  و عبادت  کا  فلسفہ  ہے یاروں؟

سمجھ نہیں پاتا، سمجھتے ہیں لوگ کیا کیا

And what is the philosophy

Of godliness and worship

I do not understand

What people understand

j

انجیل  و  گیتا  و  زبور  و  قرآن  سب پڑھا

اور کیا پڑھوں کے  پڑھتے ہیں لوگ کیا کیا

The Bible, The Geeta,

The Psalms, The Quran I read them all

What more should I read

What do people read these days?

j

ہاں  کافی  جل کٹ  سنائی ہو گی رقیب نے

عشقِ لاپرواہ سے،  جلتے ہیں  لوگ کیا کیا

And yes he must have said

Some untoward things

A love free of bounds

Makes some jealous

j

ہانے رئ تیرا پشیمانی  پے  پریشان  ہونا

ترے بھولپن سے، اجڑتے ہیں لوگ کیا کیا

Your guilt

About your guilt

Do you even realize

How many people your innocence has ruined

j

کچھ  تو  خوف  کھا  اپنی  بدنامی  کا  استاد

تیرے  بارے سرِ رہ،  کہتے ہیں  لوگ  کیا  کیا

And for the sake of all that is holy

Be afraid of losing your good name

Do you even know

What people are saying about you?

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry