Tag Archives: fasana

Scorched Earth

کچھ  کر  کے  جانا ہے،  دکھ کو مٹانا ہے

ہم دوست تو سب کے ہیں، دشمن زمانہ ہے

I must kill the misery

Before I leave

I am a friend to all

Yet the times are hateful

 

یہ دن و رات کا سفر، یہ ستاروں کا محور

پھر قیامت کا وعدہ ہے، عجیب تماشا ہے

The rotation of the planets

The paths laid out for stars

The absurd promise that one day

It will all end

 

مل کے بچھڑ گئے، بچھڑے تو مر گئے

چھوٹی سی اک بات کا، طویل فسانہ ہے

A meeting and then parting

The parting leading to death

A small matter

A long story

 

دل  ہی  تو ٹوٹا ہے،  کیا عرش بکھرا ہے؟

ہم مان چکے کب کے، بس تم کو منانا ہے

It is just a broken heart

Not the heavens torn asunder

I have come to acceptance

Are you there yet?

 

مندر میں ہوں برہمن تو مسجد میں مسلمان

میں اور کیا بنوں گا؟  کیا کس نے بنانا ہے

I am a Brahmin in the temple

A Moslem in the mosque

What else am I to be

What else will I be?

 

لبِ استاد  پے  رہتی،  مسکان  تو ہلکی سی

دل کھول کے دیکھو تو، تپتا ہوا صحرا ہے

And yes he smiles

You can see it on his lips

If you look in his heart

You’ll find a burning desert

 

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry

Let it be…

وہ خواہش پوری نہ ہوئی، نصیب سہی

میں  بدنصیب  ہوں  تو  بدنصیب  سہی

That desire

Remained unfulfilled

It must be my fate

Let it be

 

اچھا  نہیں  خود  کو  بدنصیب  کہنا!

تو بدنصیب نہ سہی، کم نصیب سہی

And I’ve heard

Its not good to curse your fate

So I do not curse it

I just say it is ill

 

جیسا بھی ہوں میں بس آپ کا ہوں

بد عادت و  بد کردار، غریب سہی

Howsoever I am

I am yours

A poor man

With poor habits

 

ہاں  آج  بھی  اسی  کا خیال آتا ہے

یہ بات عجیب لگی تو عجیب سہی

And yes I am reminded of her

To this day

If you think it strange

Let it be so

 

واپس تو آ گیا وہ حلقہِ یاراں میں

مجید تو نہیں وہ چلو منیب سہی

He has come back

To the circle of friends

He may not  be gracious

But he is prodigal

 

کسی  طرح  تو رہِ حق  پے  آ تو ذرا

قرآن گوارا نہیں تجھے؟ صلیب سہی؟

The shaikh begs me

To come back to the path

If not with the scripture

Then the cross

 

بتانا  تو ہے  کسی کو وہ فسانہِ غم

ہمدرد یہاں کوئی نہیں، رقیب سہی

And I have to tell someone

The story of my sorrow

If I do not have a sympathetic ear

Let it be a rival

 

دوستوں پے شاہی کا بوجھ پڑا ہے

کوئی بڑا عہدہ نہ سہی، نقیب سہی

My friends have been burdened

With a sash of office

Nor lordly

But attendant

 

کچھ  نسبتیں  ہیں استاد  کو  آبا سے

ان جیسا نہیں ہے انکے قریب سہی

And he has some

Connections with his ancestors

Not their like

But close enough

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry