Tag Archives: end

In Hope…

دیر سے سہی،  پیام  آنے  کی  امید  تو  ہے

جھوٹی سہی، دل کو قیام آنے کی امید تو ہے

 

ہر حسین کے ہاتھ میں اک شمع روشن ہے

آج  دلِ  خستہ  کو جلانے  کی  امید تو ہے

 

سنا  کے  اس  کی  باتیں  بہت  نشیلی  سریلی

اس سر شناس سے سر ملانے کی امید تو ہے

 

سنا کے آپ نظر سے تقدیر بدلتے ہیں

ہمیں بھی یہ انعام پانے کی امید تو ہے

 

مانا زیست کچھ نہیں ماسوا جبرِ مسلسل

چلو پھر زیست سے جانے کی امید تو ہے

 

ہرچند  استاد میری بات سن  مسکرا اٹھا

اس سنگدل صنم کو رلانے کی امید تو ہے

 

It might be some time

But I hope to hear from her

It may be a false hope

But it is a hope

 

I see beautiful faces all around me

And every man carries a flame

I hope someone

Will set fire to my heart today

 

And I’ve heard her words

Intoxicating and Harmonious

I hope to breath

In harmony with her

 

I have been told

You can change fates with just a look

I too hope for

The same reward

 

Fine, I admit it

Life is nothing but suffering

I hope that one day

This suffering will end

 

And even though he laughed

When he heard my words

One day I hope

To move him to tears

 

Advertisements

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

Scorched Earth

کچھ  کر  کے  جانا ہے،  دکھ کو مٹانا ہے

ہم دوست تو سب کے ہیں، دشمن زمانہ ہے

I must kill the misery

Before I leave

I am a friend to all

Yet the times are hateful

 

یہ دن و رات کا سفر، یہ ستاروں کا محور

پھر قیامت کا وعدہ ہے، عجیب تماشا ہے

The rotation of the planets

The paths laid out for stars

The absurd promise that one day

It will all end

 

مل کے بچھڑ گئے، بچھڑے تو مر گئے

چھوٹی سی اک بات کا، طویل فسانہ ہے

A meeting and then parting

The parting leading to death

A small matter

A long story

 

دل  ہی  تو ٹوٹا ہے،  کیا عرش بکھرا ہے؟

ہم مان چکے کب کے، بس تم کو منانا ہے

It is just a broken heart

Not the heavens torn asunder

I have come to acceptance

Are you there yet?

 

مندر میں ہوں برہمن تو مسجد میں مسلمان

میں اور کیا بنوں گا؟  کیا کس نے بنانا ہے

I am a Brahmin in the temple

A Moslem in the mosque

What else am I to be

What else will I be?

 

لبِ استاد  پے  رہتی،  مسکان  تو ہلکی سی

دل کھول کے دیکھو تو، تپتا ہوا صحرا ہے

And yes he smiles

You can see it on his lips

If you look in his heart

You’ll find a burning desert

 

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry

The both of us

آج بازار برہم کریں؟ ہم بھی تم بھی

نیلامیِ  قلم  کریں؟ ہم  بھی  تم بھی

Should we rouse

A passion somewhere?

Should we both

Put up our pens for bidding?

 

خود پے ظلم کریں ہم بھی تم بھی

جاں پہ ستم  کریں ہم بھی تم بھی

Both of us

Torture ourselves

Hurt ourselves

The both of us

 

تم جاؤ خداخانہ، ہم باسیِ میخانہ

جستجوِ علم کریں ہم بھی تم بھی

You go to the temple

I towards the tavern

We both seek

Knowledge

 

تلاش ہے کسی کی، نظرِ بےطرح کی

خواہشِ  الم  کریں   ہم  بھی  تم  بھی

We seek a vision

Like no other

A sorrow

Sought by us both

 

دعا کرتے ہیں علاجِ عشق کے لیے

دم  پے دم  کریں  ہم  بھی  تم  بھی

And we pray

For a cure

For love

A prayer repeated often

 

پتھروں میں رب نہیں تو پھر کیوں

خدا  صنم  کریں  ہم  بھی  تم بھی

And if there is no spirit

In stones

Why do we become so connected

To those rocks?

 

جو بھر گئے ہیں تیرے دل کے گھاؤ

نیا  زخم  کریں؟  ہم  بھی  تم  بھی

If your earlier wounds

Have healed

Should you and I

Make new ones?

 

یہ کیا ستم کیا؟ کیوں درد عیاں کیا

تلاشِ غم کریں؟ ہم  بھی  تم  بھی

Oh come now!

Why did you tell me

About your sorrow

Now find a new misery

 

استاد  اور کیا؟   کہنا  باقی  رہا

گفتگو ختم کریں؟ ہم بھی تم بھی

So What is left?

Yet unsaid?

Should we stop talking

The both of us?

 

Leave a comment

Filed under Ghazal