Tag Archives: dukh

Remembrance

جو کوئی بات دکھاتی ہے، وہی یاد آتی ہے

سرد  رات  ستاتی  ہے،  وہی یاد آتی ہے

When something hurts me

I am reminded of her

Winter nights

Remind me of her

 

بارہا چاند  میں  بھی  نظر  آتی  ہے

چاندنی لبھاتی ہے، وہی یاد آتی ہے

Oftimes, I see her in the moon

I like the moonlight

Though it does

Remind me of her

 

غور  سے  دیکھی  نہرِ جان  کی روانی

موجِ غم آتی جاتی ہے، وہی یاد آتی ہے

I see the river of time

Waves of joy and sorrow

One after the other

Remind me of her

 

رو رو نکال دوں زندگی سے یاد اسکی

زندگی  رلاتی  ہے،  وہی  یاد  آتی ہے

I would have wept away

Her memory

Sadly the tears

Bring back more memories

 

ایسے ہی کسی موسم میں ہم ملے تھے

یہ  رت  جلاتی  ہے،  وہی یاد آتی ہے

I remember it was similar weather

When we met

I hate this weather now

It reminds me of her

 

کاوش کی بھولنے کی غمِ دنیا لے کے

ایسے یاد جاتی ہے؟  وہی یاد آتی ہے

So I tried to forget her

Looking at the world’s sorrows

It was a fool’s errand

It does not remove memories

 

یہ غزل  ختم  تو  محفل  ختم  استاد

شمع ٹمٹماتی ہے،  وہی یاد آتی ہے

The words end

And so do the night’s revelries

The candle flickers

It reminds me of her

 

Advertisements

7 Comments

Filed under Ghazal, Poetry

Scorched Earth

کچھ  کر  کے  جانا ہے،  دکھ کو مٹانا ہے

ہم دوست تو سب کے ہیں، دشمن زمانہ ہے

I must kill the misery

Before I leave

I am a friend to all

Yet the times are hateful

 

یہ دن و رات کا سفر، یہ ستاروں کا محور

پھر قیامت کا وعدہ ہے، عجیب تماشا ہے

The rotation of the planets

The paths laid out for stars

The absurd promise that one day

It will all end

 

مل کے بچھڑ گئے، بچھڑے تو مر گئے

چھوٹی سی اک بات کا، طویل فسانہ ہے

A meeting and then parting

The parting leading to death

A small matter

A long story

 

دل  ہی  تو ٹوٹا ہے،  کیا عرش بکھرا ہے؟

ہم مان چکے کب کے، بس تم کو منانا ہے

It is just a broken heart

Not the heavens torn asunder

I have come to acceptance

Are you there yet?

 

مندر میں ہوں برہمن تو مسجد میں مسلمان

میں اور کیا بنوں گا؟  کیا کس نے بنانا ہے

I am a Brahmin in the temple

A Moslem in the mosque

What else am I to be

What else will I be?

 

لبِ استاد  پے  رہتی،  مسکان  تو ہلکی سی

دل کھول کے دیکھو تو، تپتا ہوا صحرا ہے

And yes he smiles

You can see it on his lips

If you look in his heart

You’ll find a burning desert

 

1 Comment

Filed under Ghazal, Poetry