Tag Archives: dua

A Demanding Desire

بعدِ وصل وہ پھر ہے ہجر طلب

شاید دلِ بیتاب پھر ہے سفر طلب

j

وہی الزام وہی دشنام ہم ہی بدنام

کرتے ہیں وہ پھر، میرا سر طلب

j

نشہ تو ٹوٹ گیا پر تشنگی باقی

ہوتی رہی ہم کو طلب، اکثر طلب

j

طالبِ عشق کو ملتی ہے یہ صلاح

نا سوچ اُس بارہ میں، مت کر طلب

j

کچھ مانگا تھا کچھ چاہا تھا خدا سے

خواہش تو ہوئی مردہ، تمنا اجر طلب

j

کون یہ کہتا؟ کے استاد ہے پارسا؟

اس کی نماز بے سرور، دعا اثر طلب

j

After the lovers union

She seeks a parting

Perhaps the unstilled heart

Seeks to travel further

j

The same accusations

Insinuations

Lead to my ignominy

And yet again she demands my head

j

And though I woke up from my stupor  

I remain thirsty yet

I want it

And I want more of it

j

And those who seek love

Are to be given this advice

Do not seek it

Just do not

j

So I sought out God

To ask a boon

I remained unfulfilled

My desired died eventually

j

Then who dares call him

A spiritual man?

His rituals hold no meaning

His prayers go unanswered

Advertisements

3 Comments

Filed under Ghazal, Poetry

Forgone

جوطریقِ بیداریِ سحر، ہم نے گنوا دیا

تو دعاؤں  کا  اثر،  ہم  نے  گنوا دیا

I used to wake up early

And meditate

When I lost that habit

I lost serenity

 

کبھی تو تیرے نام پے گزارا ہوتا تھا

یہ وسیلہِ گزر بسر، ہم نے گنوا دیا

At a point in time

All I had to say was your name

To find peace

I have lost that way

 

وہ زمیں اجداد کی، وہ پرکھانی حویلی

سایہِ دیوار و در،   ہم  نے  گنوا دیا

The house of my ancestors

Where their bones are buried

The shade of those mud walls

Is lost

 

جب سے شروع کی دفتر کی نوکری

عاشق دل چاک جگر،  ہم نے گنوا دیا

And when I started working

In search of profits

I lost my soul

And my spirit

 

جو پردہ گنوا کے آے ہمرے سامنے

ہوش، خرد، اپنا سر،  ہم نے گنوا دیا

When I saw her

A wondrous sight

I lost my mind

My thoughts, my head

 

گرچے بہت ملی ہمیں زن کی دولت

متاعِ  زمیں و زر،  ہم نے گنوا دیا

And though I did find

A lot of pleasant company

I did lose

Lands and wealth

 

جو چلنے لگیں ٹی وی پے خبریں

تو  شعورِ باخبر،  ہم  نے گنوا دیا

I saw news

On television

And I felt

Less elucidated

 

وہ یاد،  وہ بات،  وہ  شیریں  کلام

سنبھال رکھتے مگر، ہم نے گنوا دیا

Those words

Those memories

I would have kept them safe

But I lost them

 

بڑا فرق ہے غریبی اور فقیری میں

رازِ  طریقِ  فقر،  ہم  نے  گنوا دیا

There is a huge difference

Between poverty and being

A faqir

We’ve forgotten that secret

 

کرنا آتا تھا کبھی شیشے کو پارہ

وہ پوشیدہ ہنر،  ہم نے گنوا دیا

And yes once I knew

The alchemy of turning

Glass to mercury

I’ve lost that art

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

آخر عمرجرمِ عشق کا مزا کچھ بھی نہی

آخر عمرجرمِ عشق کا مزا کچھ بھی نہی

سزا کچھ بھی نہی ، جزا کچھ بھی نہی

 

ہم سوچے بچھڑے تو مر جاییں گے

خوفِ مہمل ہی تھا، ہوا کچھ بھی نہی

 

یا خدا تو ہی سن اس دل جلے کی فریاد

یا کہ دے  فقیر کی صدا کچھ بھی نہی

 

بازارِ دنیا میں اس جنس کی کوئی قدر نہی پر

ہماری متاں تو عشق کے سوا کچھ بھی نہی

 

کیا مانگ گئے استاُد دار پے اس کے لیے

بالمقابل اُس کے شیخ کی دعا کچھ بھی نہی

Leave a comment

Filed under Ghazal