Tag Archives: awaz

Seeking and Searching

اب جانے دے اسے، رسوائی میں کیا ہے؟

نہیں سنتا نہ سنے ، سنوائی میں کیا ہے؟

Now let it go

No use flinging mud

If he does not listen

What is the use of crying

 

دے دے مجھے، جام بے حساب دے دے

تعدادِ  جام  کی،  گنوائی  میں  کیا  ہے؟

Keep giving me cup upon cup

Do not keep a count

The numbering

Is immaterial

 

پہلے تو  گنواے،  میرے پرانے وعدے

ہنس کے پھر بولے، وفائی میں کیا ہے؟

At first I was reminded

Of certain promises

Then she laughed and said

What is the use of keeping promises?

 

آواز تو آتی ہے اسداللہ کی کہیں سے

جا  دیکھ  تو ذرا،  اترائی میں کیا ہے

I can hear

The roaring of God’s lion

Go seek out

What is happening at the watering hole

 

نہ پڑ اس  سوچ میں،  خیال کے بھنور میں

سادہ سی اک بات ہے، گہرائی میں کیا ہے؟

Do not trouble yourself

With these thoughts

It is quite simple, really

Nothing too deep

 

دل توڑنا تو ان کا  شیوہ سا بن چکا ہے

مانا  بری  بات  پر،  برائی  میں کیا ہے؟

And yes it is an old habit of hers

To break hearts

It is quite sad really

But does it really matter?

 

جب مانتا ہے کے رب تیرے قریب ہے تو

خدا ڈھونڈ خود میں، خدائی میں کیا ہے؟

When you believe

That God is near you

Seek her within yourself

Why seek her in the world?

 

کس لئے ہجر کی بات کرتا ہے استاد ؟

ملنا تو چلو ملن ہے، جدائی میں کیا ہے؟

And why is parting

So sweet to you

Meeting is afterall a blessing

What is there in parting?

 

Advertisements

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

They left smiling…

ہمدمِ عزیز سے ملاقاتیں گئیں

گم ہوے وہ دن، وہ راتیں گئیں

I miss meeting

My dear friend

I miss those days

And nights

 

محرومیِ آوازِ دوست مدت سے ہے

وہ  شیریں  کلام،  وہ  باتیں  گئیں

And it has been a while

Since I heard her voice

That sweet language

Those conversations gone

 

وعدہ تو ہے انکا، یقین نہیں میرا

خوشیاں دل میں، آتے آتے گئیں

Although she has promised it

I have my doubts

I do not think

My heart will play host to joy

 

آمدِ خورشید! بیدار او خطاکار!

یہ پیام صبح کرنیں سناتے گئیں

The sun comes! Hark!

Wake up O sinful man

This message brought by

The morning ray

 

کیوں پوچھو عہدِ جوانی کے قصے؟

کے  ویسی  تمام   وارداتیں   گئیں

And why do you ask me

About my vagrancies of youth?

All those incidents

Lost from memory

 

تیری یاد ہر سوچ بدل دیتی ہے

جو روتے آئیں، وہ گاتے گئیں

And it is your remembrance

Which alters my thoughts

Those which would bring tears

Now bring music

 

فتویِٰ کفر ہے شیخ کا مجھ پے

کے تسبیح گئی، منجاتیں گئیں

I am called a disbeliever

By the preacher

Since I lost my rosary

My lamentations

 

جو یاد کرایا  اُن کو  پرانا وعدہ

ہنس کے بولے وہ ساعتیں گئیں

And when I reminded her

Of her promises

She smiled and said

The moment has passed

 

جو ملنے آئیں استاد سے اس دن

حسینانِ شہر، مسکراتے  گئیں

That day when they came to see him

The beauties of the city

Heard him speak

And they left smiling

 

Leave a comment

Filed under Uncategorized