ہم شہیدِ عشق ہیں، مزار و دفن سے کیا غرض؟

ہم شہیدِ عشق ہیں، مزار و دفن سے کیا غرض؟

اسی لبادے میں سلا دو، ہمیں کفن سے کیا غرض

 

کیا ہوا جو آج رہِ عشق میں رقیب ہے ہم بھی ہیں

ہمیں تو سجنی سے ملنا ہے سجن سے کیا غرض؟

 

پڑھتے ہی نام استاد کا، قاصد قتل کیا، نامہ جلا دیا

جنہیں نام پے اعتراض ہوانہیں متن سے کیا غرض؟

 

کوئی  یاد  تازہ  نہ  کرو وطن  کی  میرے  سامنے

میں دیوانہ بےوطن ہوں مجھے وطن سے کیا غرض؟

 

اشتیاقِ ملن کی گزارش میری جو ان تک جا پوہنچی

جھللا کے یک دم بولے، ہمیں ملن سے کیا غرض؟

 

ناصح تیری چوٹ دار باتیں ساری دل کو جا لگیں

یہ چوٹ دل کی چوٹ ہے، اسے بدن سے کیا غرض؟

Leave a comment

Filed under Ghazal, Poetry

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s