آخر عمرجرمِ عشق کا مزا کچھ بھی نہی

آخر عمرجرمِ عشق کا مزا کچھ بھی نہی

سزا کچھ بھی نہی ، جزا کچھ بھی نہی

 

ہم سوچے بچھڑے تو مر جاییں گے

خوفِ مہمل ہی تھا، ہوا کچھ بھی نہی

 

یا خدا تو ہی سن اس دل جلے کی فریاد

یا کہ دے  فقیر کی صدا کچھ بھی نہی

 

بازارِ دنیا میں اس جنس کی کوئی قدر نہی پر

ہماری متاں تو عشق کے سوا کچھ بھی نہی

 

کیا مانگ گئے استاُد دار پے اس کے لیے

بالمقابل اُس کے شیخ کی دعا کچھ بھی نہی

Leave a comment

Filed under Ghazal

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s